منتخب غزلیں

حصارِ ذات سے نکلوں تو تجھ سے بات کروں تری صفات…

حصارِ ذات سے نکلوں تو تجھ سے بات کروں
تری صفات کو سمجھوں تو تجھ سے بات کروں

تو کوہسار میں، وادی میں، دشت و صحرا میں
میں تجھ کو ڈھونڈ نکالوں تو تجھ سے بات کروں

تو شاخ شاخ پہ بیٹھا ہے پھول کی صورت
میں خار خار سے الجھوں تو تجھ سے بات کروں

ترے اشاروں سے بڑھ کر ترا بیاں مبہم–!!
میں تیری بات کو سمجھوں تو تجھ سے بات کروں

تو اتنا دور کہ پہچاننا بھی مشکل ہے—!!!
تجھے قریب سے دیکھوں تو تجھ سے بات کروں

جھجک جھجک کے اگر ہو توبات، بات نہیں
میں تیری آنکھ میں جھانکوں تو تجھ سے بات کروں

تو میرا دوست ہے، دشمن ہے، یا کہ کچھ بھی نہیں
میں تیرے دل کو ٹٹولوں تو تجھ سے بات کروں

یہ موج موج تلاطم پہ ڈوبنا میرا—-!!!
میں اتفاق سے ابھروں تو تجھ سے بات کروں

زبانِ قیس پہ ہر وقت تیری باتیں ہیں
زبانِ قیس جو سیکھوں تو تجھ سے بات کروں

(راج کمار قیس)

انتخاب :-: ابوالحسن علی ندوی

متعلقہ تحاریر

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/