منتخب نظمیں

بے دل ہوئے ، بے دیں ہوئے ، بے وقر ہم ات گت ہوئے ب…

بے دل ہوئے ، بے دیں ہوئے ، بے وقر ہم ات گت ہوئے
بے کس ہوئے ، بے بس ہوئے ، بے کل ہوئے ، بے گت ہوئے

ہم عشق میں کیا کیا ہوئے ، اب آخر آخر ہو چکے
بے مت ہوئے ، بے ست ہوئے ، بے خود ہوئے ، میّت ہوئے

الفت جو کی ، کہتا ہے جی ، حالت نہیں ، عزّت نہیں
ہم بابتِ ذلّت ہوئے ، شائستۂ کُلفت ہوئے

گر کوہِ غم ایسا گراں ہم سے اُٹھے ، پس دوستاں!
سوکھے سے ہم دنیت ہوئے ،

تنکے سے ہم پربت ہوئے

کیا روئیے قیدی ہیں اب ، رویت بھی بن گُل کچھ نہیں
بے پر ہوئے ، بے گھر ہوئے ، بے زر ہوئے ، بے پت ہوئے

آنکھیں بھر آئیں جی رُندھا ، کہیے سو کیا ، چپکے سے تھے
جی چاہتا مطلق نہ تھا ، ناچار ہم رخصت ہوئے

یا مست درگاہوں میں شب ، کرتے تھے شاہد بازیاں
تسبیح لے کر ہاتھ میں یا میر اب حضرت ہوئے

(میر تقی میر)

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/