منتخب غزلیں

بہ نام وطن –مصطفیٰ زیدی … کون ہے جو آج طلبگ…

بہ نام وطن –مصطفیٰ زیدی

کون ہے جو آج طلبگار ِ نیاز و تکریم
وہی ہر عہد کا جبروت وہی کل کے لئیم
وہی عیّار گھرانے وہی ، فرزانہ حکیم
وہی تم ، لائق صد تذکرہء و صد تقویم
تم وہی دُشمن ِ احیائے صدا ہو کہ نہیں
پسِ زنداں یہ تمہی جلوہ نما ہو کہ نہیں ​

تم نے ہر عہد میں نسلوں سے غدّاری کی
تم نے بازاروں میں عقلوں کی خریداری کی
اینٹ سے اینٹ بجادی گئی خودداری کی
خوف کو رکھ لیا خدمت پہ کمانداری کی
آج تم مجھ سے مری جنس ِ گراں مانگتے ہو
حَلَفِ ذہن و وفادارئ جاں مانگتے ہو​

جاؤ یہ چیز کسی مدح سرا سے مانگو
طائفے والوں سے ڈھولک کی صدا سے مانگو
اپنے دربانوں سے بدتر فُقرا سے مانگو
اپنے دربار کے گونگے شُعرا سے مانگو
مجھ سے پوچھو ے تو خنجر سے عُدو بولے گا
گردنیں کاٹ بھی دو گے تو لہو بولے گا​

تم نے ہر دور میں دانش پہ کئی وار کئے
جبر کے منہ میں دہکتے ہوئے الفاظ دِیے
اپنی آسائش ِ یک عُمر ِ گریزاں کے لِیے
سب کو تاراج کیا تم نے مگر تم نہ جیے
علم نے خونِ رگِ جاں‌دیا اور نہ مَرا
علم نے زہر کا ہیمانہ پیا اور نہ مَرا ​

علم سقراط کی آواز ہے عیسےٰ کا لہو
علم گہوارہ و سیّارہ و انجام و نُمو
عِلم عبّاس علمدار کے زخمی بازُو
علم بیٹے کی نئی قبر پہ ماں کے آنسوُ
وادئ ابر میں قطروں کو ترس جائے گا
جو ان اشکوں پہ ہنسے گا وہ جھلس جائے گا​

تم ہی بتلاؤ کہ میں کس کا وفادار بنوں
عصمتِ حرف کا یا دار کا غمخوار بنوں
مشعلوں کا یا اندھیروں کا طلبگار بنوں
کس کے خرمن کے لیے شعلہء اسرار بنوں
کون سے دل سے تمہیں ساعتِ فردا دے دوں
قاتلوں کو نفسِ حضرتِ عیسیٰ دے دوں ​

صُبح ِ کاشی کا ترنّم مری آواز میں ہے
سندھ کی شام کا آہنگ مرے ساز میں ہے
کوہساروں کی صلابت مرے ایجاز میں ہے
بال ِ جبریل کی آہٹ مری پرواز میں ہے
یہ جبیں کون سی چوکھٹ پہ جھکے گی بولو
کس قفس سے مری پرواز رُکے گی بولو​

کس قفس سے غمِ دل قید ہوا ہے اب تک
کس کے فرمان کی پابند ہے رفتار ِ فلک
کون سی رات نے روکی ہے ستاروں کی چمک
کس کی دیوار سے سمٹی ہے چنبیلی کی مہک
دشتِ ایثار میں کب آبلہ پا رُکتا ہے
کون سے بند سے سیلابِ وفا رُکتا ہے​

بہ وفادارئ رہ وار و بہ تکریمِ علم
بہ گہربارئ الفاظ صنا دیدِ عجم
بہ صدائے جرس قافلئہ اہلِ قلم
مجھ کو ہر قطرہء خُون ِ شُہدا تیری قسم
منزلیں آکے پُکاریں گی سفر سے پہلے
جُھک پڑے گا در ِ زنداں مرے سر سے پہلے​

آج تم رام کے مونس نہ ہنومان کے دوست
تم نہ کافر کے ثنا خواں نہ ممُسلمان کے دوست
نہ تم الحاد کے حامی ہو نہ ایمان کے دوست
تم نہ اشلوک کے حامی ہو نہ قرآن کے دوست
تم تو سکّوں کی لپکتی ہوئی جھنکاروں میں
اپنی ماؤں کو اٹھا لاتے ہو بازاروں میں​

ذہن پر خوف کی بنیاد اٹھانے والوں
ظلم کی فصل کو کھیتوں میں اُگانے والوں
گیت کے شہر کو بندوق سے ڈھانے والوں
فکر کی راہ میں بارُود بچھانے والوں
کب تک اس شاخِ گلستاں کی رگیں ٹوٹیں گی
کونپلیں آج نہ پُھوٹیں گی تو کل پُھوٹیں گی​

کس پہ لبّیک کہو گے کہ نہ ہوگی باہم
جوہری بم کی صدا اور صدائے گوتم
رزق برتر ہے کہ شعلہ بداماں ایٹم
گھر کے چُولھے سے اُترتی ہوئی روٹی کی قسم
زخم اچھا ہے کہ ننھی سی کلی اچھی ہے
خوف اچھا ہے کہ بچوں کی ہنسی اچھی ہے​

ہو گئے راکھ جو کھلیان اُنہیں دیکھا ہے
ایک اک خوشئہ گندم تمہیں کیا کہتا ہے
ایک اک گھاس کی پتّی کا فسانہ کیا ہے
آگ اچھی ہے کہ دستور ِ نمو اچھا ہے
محفلوں میں جو یونہی جام لہو کے چھلکے
تم کو کیا کہ کے پُکاریں گے مورّخ کل کے؟​

بُوٹ کی نوک سے قبروں کو گرانے والو
تمغئہ مکر سے سینوں کو سجانے والوں
کشتیاں دیکھ کے طوفان اُٹھانے والوں
برچھیوں والو ، کماں والو ، نشانے والوں
دل کی درگاہ میں پندار مِٹا کر آؤ
اپنی آواز کی پلکوں کو جُھکا کر آؤ​

کیا قیامت ہے کہ ذرّوں کی زباں جلتی ہے
مصر میں جلوہء یوسف کی دکاں جلتی ہے
عصمتِ دامنِ مریم کی فغاں جلتی ہے
بھیم کا گرز اور ارجن کی کماں جلتی ہے
چوڑیاں روتی ہیں پیاروں کی جدائی کی طرح
زندگی ننگی ہے بیوہ کی کلائی کی طرح​

صاحبانِ شبِ دیجور سحر مانگتے ہیں
پیٹ کے زمزمہ خواں دردِ جگر مانگتے ہیں
کور دل خیر سے شاہیں کی نظر مانگتے ہیں
آکسیجن کے تلے عمر خضر مانگتے ہیں
اپنے کشکول میں ایوانِ گُہر ڈھونڈتے ہیں
اپنے شانوں پہ کسی اور کا سر ڈھونڈتے ہیں​

تو ہی بول اے درِ زنداں ، شبِ غم تو ہی بتا
کیا یہی ہے مرے بے نام شہیدوں کا پتا
کیا یہی ہے مرے معیارِ جنوں کا رستا
دل دہلتے ہیں جو گرتا ہے سڑک پر پتّا
اک نہ اک شورشِ زنجیر ہے جھنکار کے ساتھ
اک نہ اک خوف لگا بیٹھا ہے دیوار کے ساتھ ​

اتنی ویراں تو کبھی صبح بیاباں بھی نہ تھی
اتنی پرخار کبھی راہِ مغیلاں بھی نہ تھی
کوئی ساعت کبھی اِس درجہ گریزاں بھی نہ تھی
اتنی پُر ہول کبھی شامِ غریباں بھی نہ تھی
اے وطن کیسے یہ دھبّے در و دیوار پہ ہیں
کس شقی کے یہ تمانّچے ترے رُخسار پہ ہیں ​

اے وطن یہ ترا اُترا ہوا چہرہ کیوں ہے
غُرفہ و بامِ شبستاں میں اندھیرا کیوں ہے
درد پلکوں سے لہو بن کے چھلکتا کیوں ہے
ایک اک سانس پہ تنقید کا پہرا کیوں ہے
کس نے ماں باپ کی سی آنکھ اُٹھالی تجھ سے
چھین لی کس نے ترے کان کی بالی تجھ سے​

رودِ راوی ترے ممنونِ کرم کیسے ہیں
صنعتیں کیسی ہیں تہذیب کے خم کیسے ہیں
اے ہڑپّہ ترے مجبور قدم کیسے ہیں
بول اے ٹیکسلا تیرے صنم کیسے ہیں
ذہن میں کون سے معیار ہیں برنائی کے
مانچسٹر کے لبادے ہیں کہ ہرنائی کے​

عسکریت بڑی شے ہے کہ محبّت کے اصول
بولہب کا گھرانہ ہے کہ درگاہِ رسول
طبل و لشکر مُتبرّک ہیں کہ تطہیرِ بُتول
مسجدیں علم کا گھر ہیں کہ مشن کے اسکول
آج جو بیتی ہے کیا کل بھی یہی بیتے گی
بینڈ جیتے گا یا شاعر کی غزل جیتے گی​
..
1957
مصطفیٰ زیدی
شہر آذر

By the name of homeland — Mustafa Zaidi

Who is the seeker of Niaz and Honor today?
The same is the Jabrut of every covenant, the same is tomorrow's
The same family, the same, the wise.
You are the same, worthy of remembrance and a hundred calendar.
Are you the same enemy of the voice or not?
So, the prison is this you or not.

You betrayed generations in every pledge.
You shopped the wise in the markets
The brick was blown by the brick of self-respect.
I have kept the fear of the commander on service.
Today you ask me about my gender
Words of mind and loyalty ask for life

Go ask this thing from a praising person
Ask the people of Taifa with the voice of Dholak
Ask your gatekeepers for the worst of the proud.
Ask for the dumb husbands of your court
If you ask me, the dagger will speak oddo
Even if you cut the neck, blood will speak.

In every era, you have attacked the wisdom.
Gave burning words in the mouth of force
For my happiness for a lifetime of avoidance.
You destroyed everyone but you did not live
Knowledge gave the blood of life and did not die.
Knowledge drank poison and did not die

Knowledge of Socrates is the voice of such blood
Knowledge of the cradle and the end and the end.
Injured arms of Ilam Abbas Alamdar
Mother's tears on the new grave of the son of knowledge
Drops in the valley of clouds will be longing for them
The one who laughs at these tears will burn

You tell me to whom should I be loyal
Be the friend of the letter or the friend of the person
Be a seeker of torches or darkness
For whom should I become the flame of mystery
From which heart should I give you the hour of departure
Give the killers the soul of Hazrat Isa

In the morning Kashi's Tarnam is in my voice
The compatibility of Syria of Sindh is in my instrument.
The company of Kohsar is in my age.
The sound of the ball of Gabriel is in my flight.
Tell me on which threshold will these jabies bow down
From which cage will my flight stop?

From which cage the grief of heart has been imprisoned so far
Whose order is the speed of the sky bound
Which night has stopped the shine of stars
From whose wall is the fragrance of jasmine?
When does it stop in the desert of sacrifice?
Which closed stops the flood of loyalty?

Very loyal and respectful knowledge.
The deep words of Sana Did Ajam
By the voice of the people of the pen.
Every drop of blood to me, I swear to you
Destinations will call before the journey
The prison door will bow down before my head.

Today you are the monsoon of Ram, not the friend of Hanuman.
You are neither the praises of an infidel nor the friend of a Muslim.
You are neither a supporter of al-Had nor a friend of faith.
You are neither a supporter of Ashlok nor a friend of the Quran
You are in the flashing flashes of coins.
You pick up your mothers in the markets

Those who carry the foundation of fear on their mind
Those who grow the harvest of oppression in the fields
Those who gunned down the city of song
Those who lay gunpowder in the way of worry
How long will the veins of this garden break?
If the branches don't bloom today, they will bloom tomorrow.

On whom will you say Labbaik or not?
The sound of the nuclear bomb and the sound of Gautam
The provision is superior that the flame of almond atom
The type of bread that comes down from the stove of the house
The wound is good that the little bud is good
Fear is good that kids laugh is good

I have seen them ashes
What does every happy wheat say to you?
What is the story of each grass leaf?
The fire is good that the way of growth is good
In the gatherings, the wine of blood sprinkles
What will the historians of tomorrow call you?

Those who drop the graves with the tip of boot
Those who decorate their hearts with a medal
Those who lift storms after seeing the boats
The spear, the bow, the targets
Wipe out the fifty in the dargah of the heart
Bow down the eyelashes of your voice

What is the doomsday that the tongue of particles burns
The shop of Yusuf burns in Egypt.
The cry of the rape of Maryam burns.
Bhim's gourd and Arjun's bow burns
Bangles cry like the separation of loved ones
Life is naked like a widow's wrist

The people of the night pray for the dawn
The Zamzama Khawan of the stomach ask for the pain of liver
The core of the heart asks for the eagle's eye
They ask for life under oxygen.
We search for the house of deep in our Kashkol
They search for someone else's head on their shoulders.

You only speak O prison door, tell me the night of sorrow
Is this the address of my unnamed martyrs?
Is this the path of my standard of jinn
The heart is shaking that the leaf falls on the road.
There is a chain of insurgency with a jhunkar.
There is a fear with the wall.

There was never so much desert in the morning.
The path of Mughal was never so proud.
There was never an hour of avoiding this level
There was never such a whole evening of poor people.
O homeland, how are these spots on the door and walls?
What kind of slaps are these on your face?

O homeland, why is this your descended face?
Why is there darkness in Ghaurfah and Shabstan
Why does pain overflow from eyelashes like blood?
Why is there a guard of criticism on every breath?
Who raised the eyes of your parents from you?
Who snatched the earrings of your ear from you

Rod Ravi, how are your Mamnoon's mercy?
How are industries, how are they submissive to civilization?
O Harpah, how are your helpless steps?
Tell me Taxila, how are your lovers?
What are the standards of Bernai in mind?
Manchester's dresses or Harnai's

Militant is a big thing that the principles of love
Is it the family of Bolhab or the shrine of the Prophet
Tabal and army are according to that Tatheer Butol
Mosques are the house of knowledge or schools of mission
What is the daughter today, will it be the same tomorrow as well?
The band will win or the poet's poem will win
..
1957
Mustafa Zaidi
City of Azer

Translated


متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/