عالمی ادب

وہ مجھے خداوں جیسا لگتا ہے،وہ شخصجو میرے سامنے بیٹ…

وہ مجھے خداوں جیسا لگتا ہے،
وہ شخص
جو میرے سامنے بیٹھا ہے
میری خوش بیانی
اور میری دلکش مسکراہٹ سے محظوظ ہوتا ہے
میرا دل زور زور سے دھڑکنے لگتا ہے
جب میں صرف لمحہ بھر کو تمھاری طرف دیکھتی ہوں
میری قوت گویائی ختم ہو جاتی ہے
میری زبان گنگ ہو جاتی ہے، اور اک ہلکی سی
تپش میری رگوں میں دوڑنے لگتی ہے
میری آنکھوں کی بینائی کھو جاتی ہے
اور میرے کانوں میں گھنٹیاں بجنے لگتی ہیں
مجھے ٹھنڈے پسینے آنے لگتے ہیں
اور اک لرزہ طاری ہو جاتا ہے
جو میرے پورے جسم کو اپنی گرفت میں لے لیتا ہے
میں شاداب دکھائی دیتی ہوں لیکن
ایسا لگتا ہے
کہ جیسے میری جان نکل رہی ہے
لیکن اس کے لئے ہمت کرنی ہو گی
ایک غریب اور کر بھی کیا سکتا ہے!!!
شاعر: سیفو(630 – c. 570 BC)، یونانی شاعرہ
ترجمہ: فرح کامران
He seems to me equal to gods that man
whoever he is who opposite you
sits and listens close
to your sweet speaking
and lovely laughing – oh it
puts the heart in my chest on wings
for when I look at you, even a moment, no speaking
is left in me
no: tongue breaks and thin
fire is racing under skin
and in eyes no sight and drumming
fills ears
and cold sweat holds me and shaking
grips me all, greener than grass
I am and dead – or almost
I seem to me.
But all is to be dared, because even a person of poverty
Sappho (c. 630 – c. 570 BC) ،Archaic Greek poetess.

— with Farah Kamran.

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2725850247645491

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/