منتخب غزلیں

عشق کو اپنے لیے سمجھا اثاثہ دِل کا اور ا…

عشق کو اپنے لیے سمجھا اثاثہ دِل کا
اور اس دِل نے بنا ڈالا تماشا دِل کا

بعد تیرے کوئی نظروں میں سمایا ہی نہیں
اب صدا دیتا نہیں خالی یہ کاسہ دِل کا

ایک طوفان ہے روکے سے نہیں جو رکتا
موج نے توڑ دیا ہو نہ کنارا دِل کا

دو گھڑی چین سے جینے نہیں دیتا ناداں
جان پاتے ہی نہیں کیا ہے ارادہ دِل کا

وہ پلٹ آئے کبھی اور اُسے میں نہ ملوں
لے ہی ڈوبے گا کسی روز یہ دھڑکا دِل کا

چاہتیں بانٹی ہیں دنیا کو محبت دی ہے
میں نے کب یوں ہی سنبھالا ہے خزانہ دِل کا

درمیاں عشق کے دیوار کھڑی ہے شہنازؔ
عقل پہ کیسا لگا آج یہ پہرہ دِل کا

شہنازؔ مزمل

المرسل: فیصل خورشید


متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/