عکسِ خیال

فیض نے یہ نظم ١٩٧٤ء میں ڈھاکہ سے واپسی پر لکھی ھم…

فیض نے یہ نظم ١٩٧٤ء میں ڈھاکہ سے واپسی پر لکھی

ھم کہ ٹھہرے اجنبی اتنی مداراتوں کے بعد
پھر بنیں گے آشنا کتنی ملاقاتوں کے بعد ؟؟

کب نظر میں آئے گی بے داغ سبزے کی بہار؟؟
خون کے دھبے دھلیں گے کتنی برساتوں کے بعد ؟؟

تھے بہت بے درد لمحے ، ختمِ دردِ عشق کے
تھیں بہت بے مہر صُبحیں ، مہرباں راتوں کے بعد

دل تو چاھا ، پر شکستِ دل نے مہلت ھی نہ دی
کچھ گلے شکوے بھی کر لیتے ، مناجاتوں کے بعد

اُن سے جو کہنے گئے تھے ، فیضؔ جاں صدقہ کیے
اَن کہی ھی رہ گئی ، وہ بات سب باتوں کے بعد

”فیض احمّد فیض“


بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/