عکسِ خیال

علم و سخن اپنی ھر شکل ، ھرصنف میں آپ کا اوڑھنا بچھ…


علم و سخن اپنی ھر شکل ، ھرصنف میں آپ کا اوڑھنا بچھونا بلکہ آپ کے وجود کا حصہ تھا۔ مظفر وارثی صاحب کا کلام سَراسَر الہام ھے.

یہ نعت سُن کر تو یہی لگتا ھے۔

میرا پیمبر عظیم تر ھے
کمالِ خلاق ذات اُس کی
جمالِ ھستی حیات اُس کی
بشر نہیں عظمتِ بشر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

وہ شرحِ احکام حق تعالیٰ
وہ خود ھی قانون ، خود حوالہ
وہ خود ھی قرآن خود ھی قاری
وہ آپ مہتاب آپ ھالہ

وہ عکس بھی اور آئینہ بھی
وہ نقطہ بھی ، خط بھی ، دائرہ بھی
وہ خود نظارہ ھے خود نظر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

شعور لایا کتاب لایا
وہ حشر تک کا نصاب لایا
دیا بھی کامل نظام اس نے
اور آپ ھی انقلاب لایا

وہ علم کی ، اور عمل کی حَد بھی
اَزل بھی اُس کا ھے اور اَبد بھی
وہ ھر زمانے کا راھبر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

وہ آدم و نُوح سے زیادہ
بلند ھمت ، بلند ارادہ
وہ زُھدِ عیسیٰ سے کوسوں آگے
جو سب کی منزل وہ اُس کا جادہ

ھر اِک پیمبر نہاں ھے اُس میں
ھجومِ پیغمبراں ھے اُس میں
وہ جس طرف ھے خُدا اُدھر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

بس ایک مشکیزہ اِک چٹائی
ذرا سے جَو ایک چارپائی
بدن پہ کپڑے بھی واجبی سے
نہ خوش لباسی ، نہ خوش قبائی

یہی ھے کُل کائنات جس کی
گنی نہ جائيں صِفات جس کی
وھی تو سلطانِ بحرو بر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

جو اپنا دامن لہو میں بھر لے
مصیبتیں اپنی جان پر لے
جو تیغ زَن سے لڑے نہتا
جو غالب آ کر بھی صُلح کر لے

اسیر دشمن کی چاہ میں بھی
مخالفوں کی نگاہ میں بھی
امیں ھے ، صادق ھے ، معتبر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

جسے شاہِ شش جہات دیکھوں
اُسے غریبوں کے ساتھ دیکھوں
عنانِ کون و مکاں جو تھامے
خدائی پر بھی وہ ھاتھ دیکھوں

لگے جو مزدور شاہ ایسا
نذر نہ دَھن سربراہ ایسا
فلک نشیں کا زمیں پہ گھر ھے

میرا پیمبر عظیم تر ھے

وہ خلوتوں میں بھی صف بہ صف بھی
وہ اِس طرف بھی وہ اُس طرف بھی
محاذ و منبر ٹھکانے اس کے
وہ سربسجدہ بھی سربکف بھی

کہیں وہ موتی کہیں ستارہ
وہ جامعیت کا استعارہ
وہ صبحِ تہذیب کا گجر ھے
میرا پیمبر عظیم تر ھے

”مظفر وارثی“

بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/