عکسِ خیال

غزلوں کی دھنک اوڑھ ، میرے شعلہ بدن تُو ھے میرا سخ…

غزلوں کی دھنک اوڑھ ، میرے شعلہ بدن تُو
ھے میرا سخن تُو ، میرا موضوعِ سخن تُو

کلیوں کی طرح پُھوٹ ، سرِ شاخِ تمنا
خوشبُو کی طرح پھیل ، چمن تا بہ چمن تُو

نازل ھو کبھی ذھن پہ ، آیات کی صُورت
آیات میں ڈھل جا ، کبھی جبریلِ دَھن تُو

اب کیوں نہ سجاؤں میں ، تجھے دیدہ و دل میں
لگتا ھے اندھیرے میں ، سویرے کی کرن تُو

پہلے نہ کوئی رمزِ سخن تھی ، نہ کنایہ
اب نقطۂ تکمیلِ ھنر ، محورِ فن تُو

یہ کم تو نہیں ، تُو میرا معیارِ نظر ھے
اے دوست میرے واسطے ، کچھ اور نہ بن تُو

ممکن ھو تو رھنے دے ، مجھے ظلمتِ جاں میں
ڈھونڈے گا کہاں ، چاندنی راتوں کا کفن تُو ؟؟

”محسن نقوی“


بشکریہ
https://www.facebook.com/Inside.the.coffee.house

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/