منتخب غزلیں

شہرِ گُل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے جس کا وارث ہو…


شہرِ گُل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اسی خاک سے خوف آتا ہے
شہرِ گُل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اسی خاک سے خوف آتا ہے

شکل بننے نہیں پاتی کہ بگڑ جاتی ہے
نئی مٹی کو نئے چاک سے خوف آتا ہے

وقت نے ایسے گھمائے افق، آفاق کہ بس
محورِ گردشِ سفاک سے خوف آتا ہے

یہی لہجہ تھا کہ معیارِ سخن ٹھہرا تھا
اب اسی لہجہ بے باک سے خوف آتا ہے

آگ جب آگ سے ملتی ہے تو لو دیتی ہے
خاک کو خاک کی پوشاک سے خوف آتا ہے

قامتِ جاں کو خوش آیا تھا کبھی خلعتِ عشق
اب اسی جامہِ صد چاک سے خوف آتا ہے

کبھی افلاک سے نالوں کے جواب آتے تھے
ان دنوں عالمِ افلاک سے خوف آتا ہے

رحمتِ سیدِ لولاکﷺ پہ کامل ایمان
اُمتِ سیّدِ لولاکﷺ سے خوف آتا ہے

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/