منتخب نظمیں

شاید کچھ آگے آ گئے کوئے بتاں سے ہم اب یاد کر رہے ہ…

شاید کچھ آگے آ گئے کوئے بتاں سے ہم
اب یاد کر رہے ہیں کہ بھٹکے کہاں سے ہم
.
نکلے تھے جانے کیسی گھڑی گلستاں سے ہم
ایسے چھٹے کہ پھر نہ ملے آشیاں سے ہم
.
رودادِ حسن و عشق سنائیں کہاں سے ہم
شرمائیں گے حضور کہیں گے جہاں سے ہم
.
مجبور ہو کے ہاتھ میں ساغر اٹھا لیا
جب تنگ آ گئے ستمِ آسماں سے ہم
.
تھی اتفاقِ وقت ملاقات راہ کی
جانے وہ آ رہے تھے کہاں سے، کہاں سے ہم
.
کچھ اس قدر ہے ان دنوں پابندیِ قفس
ذکرِ چمن بھی کر نہیں سکتے زباں سے ہم
.
بس اس قدر ہیں ترکِ محبت کے واقعات
کچھ بدگماں سے وہ ہوئے کچھ بدگماں سے ہم
.
اچھا تو اب فسانہ سہی حسن و عشق کا
اول سے تم سناؤ کہیں درمیاں سے ہم
.
رودادِ حسن و عشق زمانہ غلط کہے
نام اپنا کاٹ دیں جو تری داستاں سے ہم
.
افسانۂ الم پہ وہ یہ کہہ کے سو گئے
اب تنگ آئے ہیں تری داستاں سے ہم
.
عرضِ کرم بھی جرم ہے اس کی خبر نہ تھی
سرکار کچھ بھی اب نہ کہیں گے زباں سے ہم
.
صیاد کچھ دن اور ہماری خطا معاف
واقف نہیں ہوئے ابھی تیری زباں سے ہم
.
دیر و حرم بھی ہوں گے مگر ہم کو کیا خبر
اٹھ کر کہاں گئے ہیں ترے آستاں سے ہم
.
بدلیں طرح طرح سے زمانے نے سرخیاں
لیکن جدا ہوئے نہ تری داستاں سے ہم
.
اب سوچتے ہیں مفت میں مٹی ہوئی خراب
آئے تھے کیوں زمیں پہ قمر آسماں سے ہم
.
قمر جلالوی​

متعلقہ تحاریر

جواب دیں

Back to top button
تفکر ڈاٹ کام
situs judi online terpercaya idn poker AgenCuan merupakan salah satu situs slot gacor uang asli yang menggunakan deposit via ovo 10 ribu, untuk link daftar bisa klik http://faculty.washington.edu/sburden/avm/slot-dana/