ہاتھی کی ذات۔۔افتخار گیلانی | مکالمہ

[ad_1]


اردو زبان کے مزاحیہ شاعر مر حو م ساغر خیامی نے کیا خوب کہا تھا۔ نفرتوں کے دور میں دیکھو کیا کیاہوگیا سبزیا ں ہندو ہیں، بکرا مسلمان ہوگیا شاید ان کو خود بھی یہ اندازہ نہیں رہا ہوگا کہ 2008ء میں انکی وفات کے بعد ان کا یہ شعر اتنی جلد بھار ت کے حالات کی اس قدر صحیح عکاسی کریگا۔ سبزیوں کے علاوہ اب تو بندر اور ہاتھی بھی ہندو بنائے گئے ہیں، جن کو گزند پہچانے کی تاک میں خونخوا رمسلمان ہمہ وقت تیار بیٹھے رہتے ہیں۔ لہذا ان کو بچانے کیلئے مسلمانوں کے سروں پر پراپیگنڈہ اور نفرت کی تلوار لٹکا کے رکھو۔حال ہی میں جنوبی صوبہ کیرالا میں ایک ہتھنی کی موت کو بہانہ بناکر فرقہ پرستوں نے مسلمانوں کے خلاف خوب زہر افشانی کی ہے۔ فلم اسٹار، کھلاڑی، سیاستدان نیز ہر معروف و غیر معروف شخص میدان میں آکر ہتھنی کی موت پر غمگین تھا اور سوگ منا رہا تھا۔ کسی بھی مخلوق کو چاہے وہ انسان ہو یا بے زبان جانور کو ایذا دینا جائز نہیں ہے ۔ مگر کاش ہتھنی کی موت پر سوگوار یہ حضرات کچھ ایسی ہی ہمدردی دہلی فسادات کے مظلوم و مقہور اور جاں بحق ہونے والے ، پیٹ پیٹ کر مارے جانے والے اخلاق حسین اور لاک ڈاون کے شکار مزدوروں کے تئیں بھی دکھاتے، تو اس ہمدردی کی قدر و منزلت بھی بڑھ جاتی۔ حال ہی میںٹی وی چینلوں پر دہلی ۔جے پور قومی شاہراہ پر بھوک سے بے حال ایک مزدور کو ایک مردہ کتے کا گوشت کھاتے ہوئے دیکھ کر بھی ان کا ضمیر نہیں جاگا۔ چونکہ اس ہتھنی کی موت کیرالا کے مسلم اکثریتی ضلع مالا پورم کے ایک دریا میں ہوئی تھی، تو مسلمانوں کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کا موقع کیسے گنوایا جاتا۔ جب تک یہ پتہ چلا کہ اس ہتھنی نے مالاپورم میں نہیں بلکہ ہندو اکثریتی پال گھاٹ علاقے میں پٹاخوں سے بھرا انناس کھایا تھا ، جس سے اسکا منہ زخمی ہوا، تب تک فرقہ وارانہ ماحول بن چکا تھا۔ خیر مجھے یاد آریا ہے کہ اس صوبہ کے متصل تامل ناڈو میں ایک ہاتھی کا قضیہ برسوں سے عدالتوں میں گردش کرتا رہا۔ معاملہ ہاتھی کے مذہب کا نہیں بلکہ اس کی ذات طے کرنا تھا۔ تامل ناڈو یا مدراسی برہمنوں کے دو فرقہ ہیں۔ بھگوان شیو کی پوجا کرنے والے فرقہ کو آئیر اور بھگوان وشنو کی پوجا کرنے والا فرقہ آئینگر کہلاتا ہے۔ آئینگر خود دو ذیلی فرقوں میں بٹے ہیں۔ شمالی تامل ناڈو سے تعلق رکھنے والے وڈاگالی، جو اشلوک و پوجامیں صرف سنسکرت زبان کا استعمال کرتے ہیں۔ ان کے ماتھے پر انگریزی حرف Uکی شکل کا قشقہ لگا ہوتا ہے۔ دوسرا ذیلی فرقہ تھنگالی ہے، جن کی اکثریت جنوبی حصہ میں ہے۔ یہ فرقہ سنسکرت کے علاوہ مقامی تامل زبان میں بھی اشلوک و پوجا ادا کرتا ہے۔ ان کے ماتھے پر انگریزی حرف وائی Yکی شکل کا قشقہ ثبت ہوتا ہے۔ جون 2015ء میں تری مالا کے ایک مندر میں کسی عقیدت مند نے ہاتھی دان میں دیا ۔ جنوبی بھارت میں مندروں کو ہاتھی دان میں دینا قدیمی روایت ہے۔ جس کو اب متفقہ طور پر پجاریوں اور حکومت نے کسی حد تک بند کروادیا۔ مند ر میں ہاتھی کیا پہنچا کہ آئینگر فرقہ کے دونوں ذیلی فرقہ آمنے سامنے آگئے۔ دونوں اس کے ماتھے پر اپنا نشان یا قشقہ ثبت کرکے اسکو اپنی ذات میں شامل کرنا چاہتے تھے۔ وڈاگالی اسکے ماتھے پر Uکا نشان تو تھنگالی پجاری اس پر اپنا حق جماتے ہوئے Yکا نشان رنگنا چاہتے تھے۔ یہ تنازعہ جب عدالت پہنچا تو معلوم ہوا کہ اسی طرح کا ایک مقدمہ 1792 ء سے اور ایک دوسرا کیس1942ء سے کورٹ کی غلام گردشوں میں پھنسا ہوا ہے۔ ٹرانکور ریاست کے مہاراجہ نے 1942ئمیں کانچی پورم کے مندر کو ایک ہاتھی دان میں دیا۔ بس کیا تھا کہ اس کی ذات پر ہنگامہ شروع ہوگیا۔چونکہ شاید مہاراجہ کو علم تھا کہ ہاتھی ایک قضیہ کھڑا کرسکتا ہے تو اس نے اس کے ماتھے پر وڈاگالی قشقہ رنگنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ مگر دوسرے فرقے نے اسکو کورٹ میں چیلنج کیا۔ یہ دونوںکیس بھارت کی عدالتی تاریخ کے قدیم ترین مقدمے ہیں۔ دونوں ہاتھیوں کے اب باقیات بھی نہیں رہیں ، مگر کیس اب بھی سپریم کورٹ میں زیر التو ا ہے، کیونکہ ان ہاتھیوں کے بدل لائے گئے تھے۔نچلی عدالتوںمیں برسہا برس کی مقدمہ بازی کے بعد1976ء میں مدراس ہائی کورٹ نے دونوں فریقوں کو ہدایت کی تھی کہ وہ دو ہاتھی مندر کو دیں۔ پجاریوں کیلئے لازم قرار دیا تھا کہ پوجا کے دوران دونوں ہاتھیوں کو یکساں طور پر شامل کریں اور دونوں ایک ہی طرح کی خوراک و احترام کے حقدار ہونگے۔ دونوں فریقوں کو بتایا گیا کہ وہ اپنے اپنے ہاتھی کی خوراک اور دیکھ بھا ل کا خرچہ بھی برداشت کریں۔ لیکن فریقین نے سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا ، جہاں تاریخ کا یہ طویل ترین کیس التواء میں ہے۔ برطانوی دور اقتدار میں 1854ئمیںضلع کلکٹر نے تھنگالی فرقہ کے حق میں فیصلہ سنایا تھا۔ مگر دوسرا فریق ہار ماننے والا نہیں تھا۔ نچلی عدالت، سیشن عدالت، ہائی کورٹ کی سنگل بینچ، ڈبل بینچ، ڈویژن بینچ، غرض فریقین نے عدالتی جنگ لڑنے اور ہاتھی کی ذات طے کرنے کیلئے کوئی کسر نہیں چھوڑی ۔ بقول معروف جرنلسٹ شاستری راما چندرن ، جو خود بھی آئینگر برہمن ہیں ، جب ایک کورٹ وڈاگالی فرقہ کے حق میں فیصلہ سناتا تھا تو لاو لشکر و بینڈ باجے کے ساتھ شہر میںہاتھی کو گھما کر جشن منایا جاتا تھا۔ ہاتھی کے ماتھے پر تھنگالی قشقہ رگڑ رگڑ کر صاف کرایا جاتا تھا۔ چنگاڑ کر ہاتھی اپنی تکلیف بھی ظاہر کرتا تھا، جس کا اس ہجوم پر کوئی اثر نہیں ہوتا تھا۔ جب دوسری عدالت سماعتوں کے بعد پچھلی عدالت کے فیصلہ کالعدم قرار دیکر پھر ہاتھی تھنگالی فرقہ کے حوالے کرتی تھی، تو بس پھر جشن منانے کی باری اس فرقہ کی ہوتی تھی۔ایک بار پھر ہاتھی کے ماتھے سے وڈاگالی قشقہ رگڑ رگڑ کر صاف کرکے اسکو نہلاکر پھر Yوالا قشقہ ثبت کیا جاتا۔ اس دوران مدراس کے کثیر الاشاعت روزنامہ دی ہندو کا وطیرہ بھی عجیب و غریب تھا۔ چونکہ اس کے مالکان بھی آئینگر برہمن ہیں تو جب فیصلہ ان کے ذیلی فرقہ کے موافق آیا تھا تو خبر سرورق پر نمایاں طور پر شائع کی جاتی تھی، اور جب فریق مخالف کے حق میں فیصلہ آتا تھا تو ، کسی اندر کے صفحہ پر خبر دبائی جاتی۔ اس پورے قضیہ کے دوران ہاتھی کو بار بار قشقہ مٹانے اور نیا قشقہ پینٹ کرنے کے تکلیف دہ اذیت سے گذرنا پڑتا تھا۔ کہتے ہیں کہ کیرالا کے بعض مقامات میں کافی عرصے سے کھیتوں میں کھڑی فصلوں کو جنگلی سوروں سے بھاری نقصان کا سامنا ہورہا تھا، تو حکومت کی جانب سے جنگلی سوروں کو مارنے کا حکم نامہ جاری ہوا۔کسانوں نے پھلوں کے اندر بارود بھر کررکھنا شروع کیا، جس کو کھاتے ہی سور کی موت ہوجاتی ۔لگتا ہے کہ بد قسمتی سے یہ پھل ایک حاملہ ہتھنی کے منہ لگ گیا، جس سے اسکا منہ زخمی ہوگیا ا ور درد سے پریشان وہ ادھر ادھر بھاگ کر مالاپورم پہنچ گئی۔جہاں و ہ گلے گلے تک پانی میں جا کر کھڑی ہو گئی۔اسی عرصے میں اس کی موت ہو گئی اور وہ پانی میں گر گئی۔ اس کی پوسٹ مارٹم رپورٹ بتاتی ہے کہ اس کے منہ میں زبردست زخم ہو گیا تھا جس کی وجہ سے وہ دو ہفتے تک نہ تو کچھ کھا سکی تھی نہ ہی پی سکی تھی۔یہ محض ایک اتفاق ہی تھا، مگر اس معاملے کو بڑی تیزی سے فرقہ وارانہ رنگ دیا گیا۔ پاکستان اور مسلمانوں کو نشانہ بناکر اپنی ناکامیوں سے عوام کی توجہ ہٹانا حکمران بی جے پی اور اسکے حواریوں کیلئے ایک آزمودہ فارمولہ بن چکا ہے۔ملک میں جنتی زیادہ معاشی ابتری اور کورونا سے نپٹنے میں ناکامی سے عوام کی حالت بگڑتی چلی جائیگی، فرقہ واریت اور پاکستان مخالف جذبات کو بھی اتنی ہی تیزی کے ساتھ ہوا دی جائیگی۔اردو زبان کے مزاحیہ شاعر مر حو م ساغر خیامی نے کیا خوب کہا تھا۔ نفرتوں کے دور میں دیکھو کیا کیاہوگیا سبزیا ں ہندو ہیں، بکرا مسلمان ہوگیا شاید ان کو خود بھی یہ اندازہ نہیں رہا ہوگا کہ 2008ء میں انکی وفات کے بعد ان کا یہ شعر اتنی جلد بھار ت کے حالات کی اس قدر صحیح عکاسی کریگا۔ سبزیوں کے علاوہ اب تو بندر اور ہاتھی بھی ہندو بنائے گئے ہیں، جن کو گزند پہچانے کی تاک میں خونخوا رمسلمان ہمہ وقت تیار بیٹھے رہتے ہیں۔ لہذا ان کو بچانے کیلئے مسلمانوں کے سروں پر پراپیگنڈہ اور نفرت کی تلوار لٹکا کے رکھو۔حال ہی میں جنوبی صوبہ کیرالا میں ایک ہتھنی کی موت کو بہانہ بناکر فرقہ پرستوں نے مسلمانوں کے خلاف خوب زہر افشانی کی ہے۔ فلم اسٹار، کھلاڑی، سیاستدان نیز ہر معروف و غیر معروف شخص میدان میں آکر ہتھنی کی موت پر غمگین تھا اور سوگ منا رہا تھا۔ کسی بھی مخلوق کو چاہے وہ انسان ہو یا بے زبان جانور کو ایذا دینا جائز نہیں ہے ۔ مگر کاش ہتھنی کی موت پر سوگوار یہ حضرات کچھ ایسی ہی ہمدردی دہلی فسادات کے مظلوم و مقہور اور جاں بحق ہونے والے ، پیٹ پیٹ کر مارے جانے والے اخلاق حسین اور لاک ڈاون کے شکار مزدوروں کے تئیں بھی دکھاتے، تو اس ہمدردی کی قدر و منزلت بھی بڑھ جاتی۔ حال ہی میںٹی وی چینلوں پر دہلی ۔جے پور قومی شاہراہ پر بھوک سے بے حال ایک مزدور کو ایک مردہ کتے کا گوشت کھاتے ہوئے دیکھ کر بھی ان کا ضمیر نہیں جاگا۔ چونکہ اس ہتھنی کی موت کیرالا کے مسلم اکثریتی ضلع مالا پورم کے ایک دریا میں ہوئی تھی، تو مسلمانوں کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کا موقع کیسے گنوایا جاتا۔ جب تک یہ پتہ چلا کہ اس ہتھنی نے مالاپورم میں نہیں بلکہ ہندو اکثریتی پال گھاٹ علاقے میں پٹاخوں سے بھرا انناس کھایا تھا ، جس سے اسکا منہ زخمی ہوا، تب تک فرقہ وارانہ ماحول بن چکا تھا۔ خیر مجھے یاد آریا ہے کہ اس صوبہ کے متصل تامل ناڈو میں ایک ہاتھی کا قضیہ برسوں سے عدالتوں میں گردش کرتا رہا۔ معاملہ ہاتھی کے مذہب کا نہیں بلکہ اس کی ذات طے کرنا تھا۔ تامل ناڈو یا مدراسی برہمنوں کے دو فرقہ ہیں۔ بھگوان شیو کی پوجا کرنے والے فرقہ کو آئیر اور بھگوان وشنو کی پوجا کرنے والا فرقہ آئینگر کہلاتا ہے۔ آئینگر خود دو ذیلی فرقوں میں بٹے ہیں۔ شمالی تامل ناڈو سے تعلق رکھنے والے وڈاگالی، جو اشلوک و پوجامیں صرف سنسکرت زبان کا استعمال کرتے ہیں۔ ان کے ماتھے پر انگریزی حرف Uکی شکل کا قشقہ لگا ہوتا ہے۔ دوسرا ذیلی فرقہ تھنگالی ہے، جن کی اکثریت جنوبی حصہ میں ہے۔ یہ فرقہ سنسکرت کے علاوہ مقامی تامل زبان میں بھی اشلوک و پوجا ادا کرتا ہے۔ ان کے ماتھے پر انگریزی حرف وائی Yکی شکل کا قشقہ ثبت ہوتا ہے۔ جون 2015ء میں تری مالا کے ایک مندر میں کسی عقیدت مند نے ہاتھی دان میں دیا ۔ جنوبی بھارت میں مندروں کو ہاتھی دان میں دینا قدیمی روایت ہے۔ جس کو اب متفقہ طور پر پجاریوں اور حکومت نے کسی حد تک بند کروادیا۔ مند ر میں ہاتھی کیا پہنچا کہ آئینگر فرقہ کے دونوں ذیلی فرقہ آمنے سامنے آگئے۔ دونوں اس کے ماتھے پر اپنا نشان یا قشقہ ثبت کرکے اسکو اپنی ذات میں شامل کرنا چاہتے تھے۔ وڈاگالی اسکے ماتھے پر Uکا نشان تو تھنگالی پجاری اس پر اپنا حق جماتے ہوئے Yکا نشان رنگنا چاہتے تھے۔ یہ تنازعہ جب عدالت پہنچا تو معلوم ہوا کہ اسی طرح کا ایک مقدمہ 1792 ء سے اور ایک دوسرا کیس1942ء سے کورٹ کی غلام گردشوں میں پھنسا ہوا ہے۔ ٹرانکور ریاست کے مہاراجہ نے 1942ئمیں کانچی پورم کے مندر کو ایک ہاتھی دان میں دیا۔ بس کیا تھا کہ اس کی ذات پر ہنگامہ شروع ہوگیا۔چونکہ شاید مہاراجہ کو علم تھا کہ ہاتھی ایک قضیہ کھڑا کرسکتا ہے تو اس نے اس کے ماتھے پر وڈاگالی قشقہ رنگنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ مگر دوسرے فرقے نے اسکو کورٹ میں چیلنج کیا۔ یہ دونوںکیس بھارت کی عدالتی تاریخ کے قدیم ترین مقدمے ہیں۔ دونوں ہاتھیوں کے اب باقیات بھی نہیں رہیں ، مگر کیس اب بھی سپریم کورٹ میں زیر التو ا ہے، کیونکہ ان ہاتھیوں کے بدل لائے گئے تھے۔نچلی عدالتوںمیں برسہا برس کی مقدمہ بازی کے بعد1976ء میں مدراس ہائی کورٹ نے دونوں فریقوں کو ہدایت کی تھی کہ وہ دو ہاتھی مندر کو دیں۔ پجاریوں کیلئے لازم قرار دیا تھا کہ پوجا کے دوران دونوں ہاتھیوں کو یکساں طور پر شامل کریں اور دونوں ایک ہی طرح کی خوراک و احترام کے حقدار ہونگے۔ دونوں فریقوں کو بتایا گیا کہ وہ اپنے اپنے ہاتھی کی خوراک اور دیکھ بھا ل کا خرچہ بھی برداشت کریں۔ لیکن فریقین نے سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا ، جہاں تاریخ کا یہ طویل ترین کیس التواء میں ہے۔ برطانوی دور اقتدار میں 1854ئمیںضلع کلکٹر نے تھنگالی فرقہ کے حق میں فیصلہ سنایا تھا۔ مگر دوسرا فریق ہار ماننے والا نہیں تھا۔ نچلی عدالت، سیشن عدالت، ہائی کورٹ کی سنگل بینچ، ڈبل بینچ، ڈویژن بینچ، غرض فریقین نے عدالتی جنگ لڑنے اور ہاتھی کی ذات طے کرنے کیلئے کوئی کسر نہیں چھوڑی ۔ بقول معروف جرنلسٹ شاستری راما چندرن ، جو خود بھی آئینگر برہمن ہیں ، جب ایک کورٹ وڈاگالی فرقہ کے حق میں فیصلہ سناتا تھا تو لاو لشکر و بینڈ باجے کے ساتھ شہر میںہاتھی کو گھما کر جشن منایا جاتا تھا۔ ہاتھی کے ماتھے پر تھنگالی قشقہ رگڑ رگڑ کر صاف کرایا جاتا تھا۔ چنگاڑ کر ہاتھی اپنی تکلیف بھی ظاہر کرتا تھا، جس کا اس ہجوم پر کوئی اثر نہیں ہوتا تھا۔ جب دوسری عدالت سماعتوں کے بعد پچھلی عدالت کے فیصلہ کالعدم قرار دیکر پھر ہاتھی تھنگالی فرقہ کے حوالے کرتی تھی، تو بس پھر جشن منانے کی باری اس فرقہ کی ہوتی تھی۔ایک بار پھر ہاتھی کے ماتھے سے وڈاگالی قشقہ رگڑ رگڑ کر صاف کرکے اسکو نہلاکر پھر Yوالا قشقہ ثبت کیا جاتا۔ اس دوران مدراس کے کثیر الاشاعت روزنامہ دی ہندو کا وطیرہ بھی عجیب و غریب تھا۔ چونکہ اس کے مالکان بھی آئینگر برہمن ہیں تو جب فیصلہ ان کے ذیلی فرقہ کے موافق آیا تھا تو خبر سرورق پر نمایاں طور پر شائع کی جاتی تھی، اور جب فریق مخالف کے حق میں فیصلہ آتا تھا تو ، کسی اندر کے صفحہ پر خبر دبائی جاتی۔ اس پورے قضیہ کے دوران ہاتھی کو بار بار قشقہ مٹانے اور نیا قشقہ پینٹ کرنے کے تکلیف دہ اذیت سے گذرنا پڑتا تھا۔ کہتے ہیں کہ کیرالا کے بعض مقامات میں کافی عرصے سے کھیتوں میں کھڑی فصلوں کو جنگلی سوروں سے بھاری نقصان کا سامنا ہورہا تھا، تو حکومت کی جانب سے جنگلی سوروں کو مارنے کا حکم نامہ جاری ہوا۔کسانوں نے پھلوں کے اندر بارود بھر کررکھنا شروع کیا، جس کو کھاتے ہی سور کی موت ہوجاتی ۔لگتا ہے کہ بد قسمتی سے یہ پھل ایک حاملہ ہتھنی کے منہ لگ گیا، جس سے اسکا منہ زخمی ہوگیا ا ور درد سے پریشان وہ ادھر ادھر بھاگ کر مالاپورم پہنچ گئی۔جہاں و ہ گلے گلے تک پانی میں جا کر کھڑی ہو گئی۔اسی عرصے میں اس کی موت ہو گئی اور وہ پانی میں گر گئی۔ اس کی پوسٹ مارٹم رپورٹ بتاتی ہے کہ اس کے منہ میں زبردست زخم ہو گیا تھا جس کی وجہ سے وہ دو ہفتے تک نہ تو کچھ کھا سکی تھی نہ ہی پی سکی تھی۔یہ محض ایک اتفاق ہی تھا، مگر اس معاملے کو بڑی تیزی سے فرقہ وارانہ رنگ دیا گیا۔ پاکستان اور مسلمانوں کو نشانہ بناکر اپنی ناکامیوں سے عوام کی توجہ ہٹانا حکمران بی جے پی اور اسکے حواریوں کیلئے ایک آزمودہ فارمولہ بن چکا ہے۔ملک میں جنتی زیادہ معاشی ابتری اور کورونا سے نپٹنے میں ناکامی سے عوام کی حالت بگڑتی چلی جائیگی، فرقہ واریت اور پاکستان مخالف جذبات کو بھی اتنی ہی تیزی کے ساتھ ہوا دی جائیگی۔




[ad_2]
بشکریہ

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo