”تھی وہ اک شخص کے تصور سے“

[ad_1]

ڈاکٹر عمرانہ مشتا ق
میری زندگی میں کئی غم ناک اور افسوسناک واقعات رونما ہوئے ہیں مگر آج جو صدمہ جانکاہ محسوس ہو رہا ہے وہ شدید تر ہی نہیں بلکہ اس کے ساتھ کئی خوشگوار یادوں کے سہارے ہی آئندہ زندگی گزارنا پڑے گی ۔ یہ وہ خبر تھی جس کے سننے کےلئے کان اور دل دونوں تیار نہ تھے ۔ مگر کیا کیجئیے کہ کچھ خبریں ایسی ہوتی ہیں جنہیں بوجھل دل و دماغ کے ساتھ سننا ہی پڑتا ہے ۔ میری زندگی میں خونی رشتوں میں ماں باپ کی دائمی جدائیوں کے بعد کچھ احساس کے رشتے بھی والدین ہی کی طرح سر پر شفقتوں اور الطاف و عنایات کے سائبان بن کر خود غرضی کے اس تپتے ہوئے صحرا میں باد صبح گاہی بن جاتے ہیں اور نیک و بد سے بچاتے رہتے ہیں ۔ ان میں میرے قبیلہ شاعری کے سردار معظم منیر نیازی ، اظہر جاوید اور آج تازہ ترین صدمہ جس نے میرے ہوش و خرد اور حواس کو باختہ کر رکھا ہے ۔اس ہستی سے لاکھوں لوگوں عقیدت اور ارادت کے رشتوں میں بندھے ہوئے تھے اور ابھی تک یقین نہیں آ رہا کہ پیر سید محمد کبیر علی شاہ گیلانی اس جہان فانی سے پردہ فرما گئے ہیں۔ یہ وہ خبر ہے جس پر صبر کے بغیر کوئی چارہ نہیں ہے ۔ وہ انتہائی شفیق اور حلیم انسان تھے ۔ اپنے تمام بہن بھائیوں اور رشتہ داروں کو اپنے پاس بلا کر ان کو معاف کر چکے تھے اور اپنی وصیت میں اپنے سارے معاملات کو شفاف کر کے اس جہان فانی کو چھوڑنے کی تیاری کر چکے تھے.قابل فخر زندگی اور قابل رشک موت کا نظارہ عصر حاضر کے اس عظیم انسان کے سفر آخرت کے دل دوز مناظر میں دیکھا ہے ۔ پیر سید محمد کبیر علی شاہ گیلانی اب اس دنیا میں نہیں رہے لیکن وہ روحانی طور پر ہمیشہ ہمارے درمیان رہیں گے۔
میرے لیئے وہ ایک روحانی باپ کا درجہ رکھتے تھے اور میری صحافتی و ادبی سرگرمیوں سے باخبر رہتے تھے ۔ مجھے شاہ جی کہہ کر مخاطب ہوتے تھے اور ملکی حالات و واقعات پر تبادلہ خیال فرماتے رہتے تھے۔ میں نے اپنی پوری زندگی میں ایسا شفیق انسان نہیں دیکھا ۔اجلے من اور روشن دماغ کے حسین امتزاج سے آپ کی شخصیت میں ایک جادو محسوس ہوتا تھا۔ دین و دنیا کے معاملات پر بڑی گہری نظر تھی۔ آپ کے حلقہ ارادت میں جرنیل ، ججز اور صحافیوں کے امام مجید نظامی مرحوم کا بھی شمار ہوتا تھا ۔ میں نے مجید نظامی مرحوم کی ایک تقریر میں سنا تھا کہ میرے پیر چورہ شریف والے پیر سید کبیر علی شاہ گیلانی ہیں ۔ نظریہ پاکستان ٹرسٹ میں لاتعداد تقریبات کی صدارت فرمائی ۔ پاکستان کے حصول میں پیر صاحب کے خاندان کا کردار تاریخ میں ہمیشہ آب زر سے روشن رہے گا ۔ میں سمجھتی ہوں کہ عصر حاضر کے اتنے بڑے خطیب کی موت پر دنیا صبح قیامت تک ماتم کناں رہے گی کیونکہ ایک عالم کی موت کل عالم کی موت ہوتی ہے۔ پیر مکرم کے ساتھ بے شمار خوشگوار یادیں وابستہ ہیں اور اس وابستگی پر مجھے ہمیشہ ناز رہے گا۔ میں صحافتی زبان میں وابستگی لکھ رہی ہوں تصوف کی اصطلاح میں نسبت بنتی ہے اور نسبتوں کو کوئی ختم نہیں کر سکتا۔ مجھے یہ فخر ہے کہ میں بھی صاحب نسبت ہوں اور اس نسبت پر مجھے ہمیشہ ناز رہے گا ۔سید صاحب کے وصال فرما جانے سے ہم یتیم ھو گئے ہیں مگر آپ کا مشن چادر اوڑھ تحریک جاری رہے گی ۔ آپ نے نصف کائنات کو جو احترام دیا اس توقیر کی شمعیں ہمیشہ فروزاں رہیں گی۔ اللہ تعالی آپ کے صاحبزادگان کو حوصلہ دے اور اس صدمہ کو برداشت کرنے کی قوت عطا فرمائے ۔ پھول وہ شاخ سے ٹوٹا کہ چمن ویران ہے ۔ آج منہ ڈھانپ کے پھولوں میں صبا روئے گی۔ خوشحال خان خٹک نے کہا تھا جب مرو تو لوگ تمہاری موت پر افسوس کریں اور جتنا افسوس آج پیر مکرم سید محمد کبیر علی شاہ گیلانی کی موت پر ہو رہا ہے اس نے ثابت کر دیا ھے کہ موت العالِم موت العالَم۔ آج ایک کثیر تعداد جو آپ کی عقیدت مند تھی وہ آپ کی جدائی میں بے حال ہوکر آہ و فغاں میں ڈوبی ہوئی ہے۔ ایک ہی احساس تقویت دلاتا ہے کہ پیر صاحب آنکھوں سے ہی اوجھل ہوئے ہیں ان کامشن تو زندہ ہے اور تا ابد زندہ رہے گا ۔ یہ ان روائتی پیروں سے بالکل منفرد تھے جن کی نظریں مریدین کی جیبوں پر ہوتی ہیں آپکا شمار ہمیشہ سخی اور فراخدل لوگوں میں ہو گا جنہوں نے لوگوں کے دکھ درد کا درماں کیا اور ان کی جائز ضروریات کو پورا کیا ۔ آپ کے چاہنے والوں کی کثیر تعداد ہر شعبہ ¿ حیات میں موجود ہیں ۔ دین و دنیا سے آگاہ یہ پیر صاحب جدید عہد کے تقاضوں کو نبھاتے ھوئے اللہ کو پیارے ہو گئے۔ مولائے کریم آپ کو مخلوق خدا کی خدمات پر جنت الفردوس میں اعلی ترین مقام سے سرفراز فرمائے اور صاحبزدگان کو اپنے جلیل القدر والد گرامی کا مشن جاری رکھنے کی توفیق دے اور پیر صاحب کے دوستوں کی تکریم اور توقیر میں کوئی دقیقہ فروگذاشت نہ کریں ۔ آسماں ان کی لحد پہ شبنم افشانی کرے ، سبزہ نورستہ اس گھر کی نگہبانی کرے۔
اس وقت بجٹ پر بہت بحث ہو رہی ہے ۔ وبائی آفت کی وجہ سے پوری دنیا کی معیشت جان کنی کے عالم میں ہے۔ اس وقت وزیر اعظم عمران خان کی حکمت عملی اور اسلوب حکمرانی نے گرتی ہوئی معیشت کو جس طرح سنبھالا دیا ہے اس پر اپوزیشن کی طرف سے تنقید نہیں تحسین ہونی چاہئے۔خبر ہے کہ پنجاب کی جامعات میں قرآن حکیم کو ترجمہ کے بغیر پڑھے ڈگری نہیں ملے گی۔ گورنر پنجاب نے اپنی دنیا اور آخرت کو سنوار لیا ہے۔ یہ بہت بڑا کارنامہ آپ کے نصیب میں لکھا ہوا تھا ۔یہ بہت بڑا کارنامہ ہے جس کو جتنا ہی سراہاجائے کم ہے۔ ہمارے کچھ ساتھی جو کرونا کا شکار ہو کر اب صحت یاب ہو رہے ہیں وہ لوگوں میں مایوسی نہ پھیلائیں کہ آپ کسی غار یاجنگل میں بھی چلے جائیں کرونا آپ کو ہونا ہی ہے ۔ایسی وہ باتیں کیوں کہہ رہے ہیں لوگوں کو یقین کی دولت سے محروم نہ کریں اور پوری دنیا کے انسانوں کے لیئے دعا کریں کہ وہ اس وبا سے بچ جائیں اس عمل سے آپ کو ثواب بھی ملے گا اور تنگ نظری کے دورے بھی دور ہو جائیں گے ۔اللہ تعالی ہم سب کو اس بلائے ناگہانی کی پریشانی سے نجات دے آمین۔
(کالم نگار معروف شاعرہ، سیاسی
وسماجی موضوعات پر لکھتی ہیں)
٭….٭….٭


[ad_2]
بشکریہ

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo