::: " ساختیات اور شاعری " ::: *احمد سہی…

[ad_1]

::: " ساختیات اور شاعری " :::

*احمد سہیل*

پرانے کاغذات، فائلوں اور کتابوں کی دھول صاف کرتے ہوئے ایک فائل میں کوئی چالیس سال پہلے اپنی طالب علمی کے زمانے کی "ساختیات اور شاعری" پر یہ تحریر ہاتھ لگی۔ یہ وہ زمانہ تھا جب میں " ساختیات " پر کتاب لکھنے کے لیے مطالعہ کررہا تھا اور دینا کے مختلف ممالک سے مواد جمع کررہا تھا۔ پہلے ساکتیات اور شاعری کے فکری اور ساختیاتی نظرئیے کی وساطت سے کچھ باتیں کرلی جائیں۔

** ساختیات اور شاعری" کا فکری اور زمانی سفرکا مختصر احوال **

انسانیت میں ساختیات فکر کی ایک تحریک ، بشریات ، لسانیات ، اور ادبی نظرئیے کی وسیع ہے یہ 1950 اور ’60 کی دہائی میں بااثر فکری اور متنازعہ فکری نظریہ ہے۔ بنیادی طور پر فرڈینینڈ ڈی سسوسر کے لسانی نظریات کی بنیاد پر ساختیاتی زبان کو اشارے اور اشارے کا ایک نظام سمجھتا تھا ، جس کے عناصر صرف ایک دوسرے کے ساتھ اور اس نظام کے سلسلے میں قابل فہم ہیں۔ ادبی نظریہ میں ، ساختیات نے اس یقین کو چیلنج کیا تھا کہ ادب کے کام نے ایک دی گئی اور حقیقت کی عکاسی کی ہے۔ اس کے بجائے ، ایک متن لسانی قرائن / کنونشنوں پر مشتمل تھا اورجو دیگر نصوص/ متن کے درمیان موجود تھا۔ ساختیاتی نقادوں نے نقاشی یا پلاٹ جیسے بنیادی ڈھانچے کا جائزہ لے کر مواد کا تجزیہ کیا اور یہ ظاہر کرنے کی کوشش کی کہ یہ نمونہ کس طرح آفاقی تھا اور اس طرح انفرادی کاموں اور ان دونوں نظاموں کے بارے میں عام نتائج اخذ کرنے کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے جہاں سے وہ سامنے آئے تھے۔ رومن جیکب سن کی طرح ،ماہر بشریات کلاڈ لیوی اسٹراس ساختیات کا ایک ن نقاد اور دانشور تھے۔ ناتھروپ فرائی کی مغربی ادب کو آثار قدیمہ کی درجہ بندی کرنے کی کوششوں کی ساختی سوچ کی کچھ بنیاد تھی۔ ساخت پرستی زبان کو ایک بند ، مستحکم نظام کے طور پر مانتی ہے اور 1960 کی دہائی کے آخر تک اس نے راستہ اختیار کر لیا تھا۔

*** ساختیاتی شاعری کا نظریہ اور اس کی وضاحت مع ن م راشد کے ایک سانیٹ کا حوالہ***

یہ بدقسمتی رہی ہے کہ ساختیات لسانیات ، معنیاتی اور دیگرحوالے سے نسبتا محرومانہ {esoteric } باطنی عناصر کے پس منظر پر منحصر ہے کہ اس کی ادبی تنقید میں اس کے استعمال کی وضاحت کرنا بہت مشکل اور کٹھن ہے لیکن میرا خیال ہے کہ ادبی کام اور تخلیق کاری کے تجزیے میں اس کے ڈھانچے کے بارے میں یہ کیا کوئی نظریہ یا فکر نہیں ہے۔ اور پھراگر اس کی جانب بڑھیں جو ساخت کی ڈھانچہ نگاری کو پورا کرنے کی کوشش کرتا ہے۔

جب ساختیات کا نقاد کسی نظم پر نگاہ ڈالتا ہے ، مثال کے طور پر ، وہ کسی خاص وقت میں شاعر کی ذہنی کیفیت کی تخلیق یا اس دور کی عکاسی کے طور پر اس کام کی ترجمانی نہیں کررہے ہیں جس میں نظم لکھی گئی تھی۔ ساختیات نگاری کے لئے تاریخی ، معاشرتی ، معاشی اور سیاسی خدشات اہم نہیں ہوتے ہیں۔ اس کے بجائے ، ایک ساختیات نگار نقاد ایک نظم (جیسے سونٹ ، ولایلی) کی ساخت ، اس کے الفاظ اور جملے کی ساخت ، اور استعاراتی زبان کے استعمال پر نگاہ ڈالتا ہے۔

سانیٹ مغربی شاعری کی ایک قدیم صنف ہے اور یہ چودہ مصروں کی ایک ایسی نظم ہوتی ہے جس میں ایک بنیادی جذبہ یا خیال کو دو بندوں میں پیش کیا جاتا ہے۔پہلے بند میں آٹھ اور دوسرے بند میں چھ مصرعے ہوتے ہیں۔ پہلے بند میں خیال کا پھیلاؤ ہوتا ہے اور دوسرے میں اس کی تکمیل کی جاتی ہے۔ کہیں کہیں پہلا بند بارہ مصرعوں پر اور دوسرا بند دو مصروں پر مشتمل ہوتا ہے مگر چودہ مصروں کی پابندی ضروری ہے۔ اس میں قافیوں کی ترتیب بدلتی رہتی ہے۔- اردو شاعری میں سانیٹ کی روایت کا جائزہ لیا جائے تویہ بات سامنے آتی ہے کہ اردو میں نہ صرف اطالوی اور شیکسپئیری سانیٹ وجود میں آئے بلکہ دو نئی ہئیتوں میں سانیٹ لکھنے کا رواج ہوا ۔ان میں ایک ’’اردو سانیٹ‘‘ اور دوسرا’’شیرانی سانیٹ‘‘ ہے۔اردو سانیٹ شیکسپئیری سانیٹ کی بدلی ہوئی شکل ہے۔ یہ سب ساختیاتی ہیتیں اور مشاہبتیں ہیں ۔۔۔۔۔۔ ن م راشد کا یہ سانیٹ "خواب کی بستی " ساختیاتی شعریات کے نظرئیے کے حوالے سے ایک عمدہ مثال ہے۔ اس سانیٹ میں تمثال اس کی داخلی ساخت کو تشکیل دیتے ہیں۔ اور سیاق کا عمل فطرت کے تمام عمل میں تمثال داخلی تصورات کو ابھارتا ہے۔

مرے محبوب، جانے دے، مجھے اُس پار جانے دے

اکیلا جاؤں گا اور تیر کے مانند جاؤں گا

کبھی اس ساحلِ ویران پر میں پھر نہ آؤں گا

گوارا کر خدارا اس قدر ایثار جانے دے!

نہ کر اب ساتھ جانے کے لیے اصرار جانے دے!

میں تنہا جاؤں گا، تنہا ہی تکلیفیں اٹھاؤں گا

مگر اُس پار جاؤں گا تو شاید چین پاؤں گا

نہیں مجھ میں زیادہ ہمتِ تکرار جانے دے!

مجھے اُس خواب کی بستی سے کیا آواز آتی ہے؟

مجھے اُس پار لینے کے لیے وہ کون آیا ہے؟

خدا جانے وہ اپنے ساتھ کیا پیغام لایاہے

مجھے جانے دے اب رہنے سے میری جان جاتی ہے!

مرے محبوب! میرے دوست اب جانے بھی دے مجھ کو

ساختیات اس بات پر توجہ مرکوز کرتی ہے کہ اس کام کے اندرونی عمل (یعنی صرف وہی ہے جو نظم میں ہی ہے اور بیرونی معاملے کو نظرانداز کرتا ہے۔ غیر معمولی معاملات کو دریافت کرتا ہے۔ {احمد سہیل}

— with Iqra Ghaffar and 48 others.

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2794535344110314

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

slot online gacor Situs IDN Poker Terpercaya slot hoki rtp slot gacor slot deposit pulsa
Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo