سراؔج اورنگ آبادی خبرِ تحیرِ عِشق سُن، نہ جنوُں ر…

[ad_1]

سراؔج اورنگ آبادی

خبرِ تحیرِ عِشق سُن، نہ جنوُں رہا، نہ پَرِی رہی
نہ تو تُو رہا، نہ تو مَیں رہا، جو رہی سو بے خبرِی رہی

شہِ بے خودی نے عطا کِیا، مجھے اب لباسِ بَرَہنگی
نہ خِرد کی بخیہ گرِی رہی، نہ جنوُں کی پردَہ دَرِی رہی

چلی سمتِ غیب سے کیا ہَوا کہ چمن ظہوُر کا ، جَل گیا
مگر ایک شاخِ نہالِ غم ، جسے دِل کہیں سو ہرِی رہی

نَظَرِ تغافُلِ یار کا گِلہ کِس زباں سے بَیاں کرُوں !
کہ شرابِ صد قدحِ آرزو، خُمِ دِل میں تھی، سو بھرِی رہی

وہ عجب گھڑی تھی مَیں جس گھڑی لِیا درس نُسخۂ عِشق کا
کہ کتاب عقل کی طاق میں جُو ں دھری تھی تیو نہی دھرِی رہی

تِرے جوشِ حیرتِ حُسن کا اثر اِس قدر سےیہاں ہُوا
کہ نہ آئنہ میں رہی جِلا ، نہ پری کو جلوہ گَرِی رہی

کِیا خاک آتشِ عِشق نے دِلِ بے نَوائے سراؔج کو
نہ خطر رہا، نہ حذر رہا، سو وہ ایک بے خَطَرِی رہی

سراؔج اورنگ آبادی
…………………………………..
احمد فرازؔ

تِرا قُرب تھا کہ فِراق تھا، وہی تیری جلوہ گری رہی
کہ، جو روشنی تِرے جسم کی تھی، مِرے بدن میں بھری رہی

تِرے شہر میں چلا تھا جب، تو کوئی بھی ساتھ نہ تھا مِرے
تو میں کِس سے محوِ کلام تھا، تو یہ کِس کی ہمسفری رہی

مجھے اپنے آپ پہ مان تھا، کہ نہ جب تلک تِرا دھیان تھا
تو مِثال تھی مِری آگہی، تو کمال بے خبری رہی

مِرے آشنا بھی عجیب تھے، نہ رفِیق تھے نہ رقِیب تھے
مجھے جاں سے درد عزیز تھا، اُنھیں فکرِ چارہ گری رہی

میں یہ جانتا تھا مرا ہنر، ہے شِکست و ریخت سے مُعتبر
جہاں لوگ سنگ بَدست تھے، وہیں میری شِیشہ گری رہی

جہاں ناصَحوں کا ہجُوم تھا، وہیں عاشقوں کی بھی دُھوم تھی
جہاں بخیہ گر تھے گلی گلی، وہیں رسمِ جامہ دَرِی رہی

تِرے پاس آ کے بھی جانے کیوں، مِری تشنگی میں ہَراس تھا
بہ مِثالِ چشمِ غزال جو لبِ آبجو بھی ڈری رہی

جو ہَوَس فروش تھے شہر کے، سبھی مال بیچ کے جا چکے
مگر ایک جنسِ وفا مِری سرِ رَہ دَھری کی دَھری رہی

مِرے ناقدوں نے فراز جب، مِرا حرف حرف پَرَکھ لِیا
تو کہا کہ عہدِ ریا میں بھی، جو بات کَھرِی تھی کَھرِی رہی

احمد فراز
……………………….
شفیق خلشؔ

اِک عَجیب موڑ پہ زندگی سَرِ راہِ عِشق کھڑی رہی
نہ مِلا کبھی کوئی ردِّ غم، نہ ہی لب پہ آ کے ہنسی رہی

کبھی خلوَتوں میں بھی روز و شب تِری بزم جیسے سَجی رہی
کبھی یُوں ہُوا کہ ہجوم میں، مجھے پیش بے نَفَری رہی

سَبھی مُشکلیں بھی عجیب تھیں رہِ وصل آ جو ڈٹی رہِیں
نہ نظر میں اِک، نہ گُماں میں کُچھ ، عَجَب ایک بے نظری رہی

مجھے ضبطِ غم سے نہیں گِلہ، رُکے سَیلِ غم سے ہُوا بُرا
نہ عیاں تھا چہرے سے درد وغم، مگر آنکھ تھی کہ بھری رہی

میں تیار کب نہ تھا مرنے پر، مگر اِس سِتم کا بھی کیا عِلاج
تِری گفتِ آمد و رفت سے، بَھلی موت سر سے ٹلی رہی

شفیق خلشؔ


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo