کرونا اور طلبہ کا مستقبل

[ad_1]

سید عارف نوناری
تعلیم ملکی خوشحالی اور ترقی میں اہم کردار کرتی ہے۔ تعلیم کے سبب ہی ملک کے تمام شعبوں میں جدیدیت آتی ہے۔ لہٰذا ریاست یا حکومت کو تعلیمی فیصلے کرتے وقت زمینی حقائق اور طلبہ کے مستقبل کا ضرور خیال رکھنا چاہیے ورنہ ملک پستی کی طرف سفر کرنا شروع کر دیتا ہے۔ کرونا نے جہاں دنیا بھر کے نظاموں کو تباہ و برباد کیا ہے وہاں تعلیمی نظا م میں بھی جمود سی کیفیت پیدا ہوتی جارہی ہے۔ کرونا اس وقت آیا جب سال کے آخر میں تعلیمی سال مکمل ہوکر امتحانات کے انعقاد کا بندوبست جاری تھا، اب تعلیم آن لائن ہوگئی۔ یونیورسٹیوں کے تعلیمی سمسٹر کے معاملات خراب ہوئے ہیں۔ حالات کے ایسے تناظر میں حکومت پاکستان اور صوبوںکے وزرا ءنے جو فیصلے کیے ہیںوہ میرے خیال میں نہ تو انصاف کے تقاضوں کو پورا کرتے ہیںاور نہ طلبا کی ذہنی صلاحیتوں کے مطابق ہیں۔ تعلیمی فیصلے کبھی کبھار غلط بھی ہو جاتے ہیں اور وہ صرف ایسی صورت میں غلط ہوتے ہیں جب ملک میں موجود ماہرین تعلیم اور دانشوروں کی مشاورت اس میں شامل نہ ہو۔ موجودہ پر وموشن پالیسی کا اعلان کرتے وقت چاروں صوبوں کے متعلقہ وزراءتعلیم توموجود تھے لیکن شائد انہوں نے بورڈز کی تجاویز کو مدنظر رکھ کر ہی فیصلے کیے ہیں۔ حالانکہ نویں، دسویں، گیارہویںاور بارہویں جماعتوں کے امتحانات بورڈز کی انتظامیہ کی مدد سے اگست یا ستمبر میں بھی لیے جاسکتے ہیں اور 2021 کے امتحانات اسی طرح دو ماہ آگے چلے جاتے تو اس فارمولا میں کوئی حرج نہیں تھا۔ لیکن بورڈز کے معززین کو ایسے فارمولا سے انتظامی امور میں محنت اور طریقہ کار وضع کرنے میں کام زیادہ کرنا پڑتا ۔ پھر حکومت نے اس تعلیمی فیصلہ کو کرنے میں بہت جلدی سے کام لیا اور ملک کے تعلیمی امتحانات اور انتظامی امور کے ماہرین کی آراءکو نظر انداز کیا ہے۔
اس فارمولا کے بعد اب کالجوں اور یونیورسٹیوں کے داخلہ میں طلباءکو مسائل کا سامنا کرنا پڑے گا۔ میڈیکل اور انجینئرنگ شعبہ میں بھی داخلوں کی پالیسوں میں تبدیلیوں کی ضرور ت ہوگی اور میرٹ پالیسی میں بھی ردوبدل کے امکانات واضح ہیں۔ بہتر یہ تھا کہ کسی مثبت فارمولا کے ذریعہ طلباءکا امتحان ٹرم وائز دے دیا جاتا ۔ دوسری طرف سکولوں اور کالجوں میں 15 جولائی تک موسم گرما تعطیلات میں بھی اضافہ کر دیا گیا ہے اور نوید سنائی ہے کہ چھٹیوں میں مزید اضافہ بھی ہوسکتا ہے۔پرائیویٹ اکیڈمیز جہاں آن لائن کلاسیں لے رہے ہیں وہاں گورنمنٹ بھی کوئی ایسی پالیسی بنا سکتی ہے کہ آن لائن کلاسوں کا بندوبست کرے تاکہ طلباکی تعلیم کاحرج نہ ہو۔
(کالم نگارقومی امورپرلکھتے ہیں)
٭….٭….٭


[ad_2]
بشکریہ

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

slot online gacor Situs IDN Poker Terpercaya slot hoki rtp slot gacor slot deposit pulsa situs judi bola resmi
Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo