خاص مضمون : لاہور کی منڈیاں

2016ء میں لاہور سوا کروڑ کی آبادی کاشہر ہے۔ اب اس میں بیسیوںجدید مارکیٹیں اور بازار بھی ہیں مگر قیام پاکستان میں اس کے بڑے تجارتی مراکز منڈی ہی کہلاتے تھے تب لاہور کی آبادی چھ سات لاکھ تھی اور س میں کئی منڈیاں تھیں ۔ ذیل میں انہی کا ذکر ہے اور کچھ دیگر منڈیوں کا بھی۔
میوہ منڈی
یہ گوالمنڈی میں تھی ۔ 1960ء کے لگ بھگ ایک موریہ پل چوک اور محلہ داراشکوہ کے مابین جگہ پر منتقل ہوئی ۔ چند سال بعد بادامی باغ ریلوے اسٹیشن کے پاس منتقل ہو گئی اور زیادہ تر ’’سبزی منڈی ‘‘ کے نام سے جانی جانے لگی ۔ 1970ء کے بعد اس طرح کی کچھ منڈیاں بند روڈ (نزد شیزان فیکٹری ) اور جی ٹی روڈ باغبانپورہ (مقابل گورنمنٹ ہائی سکول ) میں بنیں اور کوٹ لکھپت میں بھی ۔ پھر باغبانپورہ والی منڈی سنگھ پورہ موڑ کے پا س ویٹ مین روڈ پر منتقل ہو گئی اور وہاںسے کچھ عرصہ بعد قریب ہی بیگم پورہ سٹاپ کے پاس ایک وسیع احاطے میں ۔ کوٹ لکھپت والی منڈی 2013ء میں موضع کا چھا میں منتقل ہو گئی تھی ۔ بادامی با غ والی منڈی 2016کے آواخر میںموضع لکھوڈہر کے پاس چلی جائے گی۔ شیزان فیکٹری کے پاس والی منڈی ختم ہو گئی تھی ۔ پھرعلامہ اقبال ٹاؤن بنا تو یہ منڈی اس کے کامران بلاک کے پاس بن گئی ۔ ملتان روڈ اور وحد ت روڈ کے سنگم پر ۔
دھوبی منڈی
پرانی انار کلی اور جی پی او کے مابین محلہ میں قیام پاکستان تک دھوبی منڈی تھی ۔ انگریزوں کے دور میں ہیرا منڈی (بازار حسن) بھی وہیں تھی جو بعد میں ٹکسالی دروازہ میں چلی گئی ۔ پھر دھوبی منڈی محلہ میں سناروں نے کئی دکانیں اور ورکشاپیں بنا لیں تو اسے ’’سنہری منڈی ‘‘ بھی کہا گیا اور بازارِ زرگراں‘‘ بھی ۔ اس کے قریب ہی محلہ لنگر خان بلوچ ہے۔
چُونامنڈی
یہ کشمیری دروازہ کے اندر ایک محلے میں تھی ۔ کئی تاریخی واقعات وہاں سے منسوب ہیں مثلا ً سکھوں کے گرو اَرجن دیو کا گردوارہ بھی وہیں ہے ۔ اب چونا منڈ ی گرلز کالج کی وجہ سے بھی اس کا نام معروف ہے۔
گھاس منڈی
مویشیوں کے چارہ کی خرید و فروخت کے لیے لاہور کے کئی علاقوں میں چھوٹی چھوٹی منڈیاں رہیں ۔ اب بھی کئی جگہ موجود ہیں عرف عام میں اُنھیں گھاس منڈی کہا جاتا ہے ۔ کچا راوی روڈ پر کریم پارک کے پاس بھی ایسی منڈی ہوتی تھی ،جی ٹی روڈ باغبانپورہ پربھی تھی۔ اس کی وجہ سے اومنی بس کے وہاں کے سٹاپ کا نام بھی ’’گھاس منڈی اسٹاپ ‘‘تھا ۔ پھر اس کا ایک حصہ سکھ نہرا سٹاپ کے قریب بھی بن گیا ، جی ٹی روڈ کے سُکھ نہر چوک سے شمال کو جانیوالی سلطان محمود روڈ پر بلکہ تھا نہ باغبانپورہ کے مشرق میں انگوری باغ اسکیم کے شمال کی کھلی جگہ پر بھی کچھ عرصہ یہ منڈی رہی مگر ایک بار زبردست آتشزدگی کے بعد وہ ختم ہو گئی تھی ۔ چوک داروغہ والا کے پاس بھی گھاس مندی بنی ۔ اسی طرح ٹھوکر (ملتان روڈ ) اور کاہنا (فیروز پور روڈ )کی طرف بھی ۔
بکر منڈی
بکروں وغیرہ کی خرید و فروخت کے لیے پہلی بکر مندی وہاں تھی جہاں اب علی پارک (نزد ٹکسالی محلہ) ہے ۔ پھر یہ چوک چوبُرجی کے پاس بھی رہی ۔ وہاں سے یہ بابو صابو کے پاس بند روڈ پر قائم ہوئی اور کوئی نصف صدی وہاں رہی ۔ 2010کے لگ بھگ یہ ملتان روڈ پر ’’ شاہ پور کانجراں‘‘ منتقل ہو گئی ۔
سوتر منڈی 
یہ اندرون لوہاری دروازہ اناج منڈی کے پاس تھی اور یہاں دھاگوں اور ڈوریوں وغیرہ جیسی اشیا ملتی تھی۔
پاپڑ منڈی
یہ منڈی شاہ عالم دروازہ اور لوہاری دروازہ کے مابین علاقہ میں نیویں مسجد کے پاس تھی ۔
بان منڈی
یہ کسیرا بازاراور موتی مسجد (چوک رنگ محل ) کے درمیانی علاقے میں ہے ۔ یہاں کسی دور میں چا رپائیوں کا بان اور پلنگوں کی ’’اُنار ‘‘ بکتی تھی ۔ پھر چار پائیاں بُننے کے لیے سوتر وغیرہ ملنے لگا۔ اب بھی یہ کسی نہ کسی شکل میں قائم ہے۔
اکبری غلہ منڈی
اناج کی اشیاء کی خرید و فروخت کے لیے اناج منڈی کسی دور میں اندرون لوہاری دروازہ چوک جھنڈا میں ا س جگہ قائم تھی جہاں سے ایک راستہ موری دروازہ کو جاتا ہے ۔ پھر یہ نواں کوٹ کی طرف منتقل ہوئی پھر اکبری دروازہ میں قائم ہوئی اور اکبری میں اب بھی قائم ہے جہاں اناج کی مختلف اشیاء کی سینکڑوں دکانیں ہیں۔
چمڑہ منڈی 
مویشیوں اور بکروں وغیرہ کھالوں کی خرید و فروخت کے لیے یہ منڈی سلطانپورہ ( جی ٹی روڈ) سے تیزاب احاطہ موڑ ( جی ٹی روڈ) تک ہے ۔ ذیلی سڑکوں اور گلیوں میں بھی آرھتیوں کے کئی گودام ہیں۔
نمک منڈی
یہ منڈی بانسانوالہ بازار (رتن چند روڈ )کے وسط میں ایک احاطے میں قائم ہے۔
پان منڈی
یہ انار کلی بازار کے شمالی کونے پر ایک چھوٹے سے بازار کی صورت میں قائم ہے، یہاں عام پر انڈیا سے آئی ہوئی چھوٹی موٹی اشیاء بھی فروخت ہوتی ہیں ۔
لکڑ منڈی (ٹمبر مارکیٹ)
یہ راوی روڈ پر نیازی چوک سے ذرا پہلے ایک وسیع علاقے میں قائم ہے ۔ یہاں شہتیر ، کڑیاں اور بنے بنائے دروازے کھڑکیاں وغیرہ فروخت ہوتے ہیں ۔
ہیرا منڈی
یہ ٹکسالی محلہ میں بازار حسن کے نام سے بھی مشہور ہے۔ یہ ٹبی تھانہ کے اردگرد کی درجن بھر گلیوں میں پھیلی ہوئی ہے۔
لنگے منڈی 
یہ نوگزہ چوک (ٹکسالی محلہ)سے چوک رنگ محل کی طرف جاتے ہوئے دائیں ہاتھ واقع ہے۔
کنک منڈی
یہ کنک (گندم) منڈی مین بازار مزنگ میں قائم تھی ۔ اب بھی وہاں اس طرح کی کچھ دکانیں مل جاتی ہیں ۔
مچھلی منڈی
یہ بھاٹی چوک اور چوک اُردو بازار کے درمیان واقع ہے ۔
گوالمنڈی 
یہ چمبر لین روڈ اور نسبت روڈ کے پاس واقع ہے اب یہ منڈی تو نہیں رہی لیکن اس پورے علاقے کا نام گوالمنڈی ہی ہے۔

ممتاز راشد ؔلاہوری

[ads1][ads2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo