( گوشہ ء کلام ِ اَنجُــمؔ خــیالی ) 1۔ دیے جلا …

[ad_1] ( گوشہ ء کلام ِ اَنجُــمؔ خــیالی )

دیے جلا کے ندی میں بہایا کرتا تھا
فلک کو اپنے ستارے دِکھایا کرتا تھا

چہار سَمت محبّت کے بھیجتا تھا رسول
میں گھر کی چھت پہ کبوتر اُڑایا کرتا تھا

مِرے مزاج میں غربت کی کوئی چھاپ نہ تھی
میں ریت کے بھی محل ہی بنایا کرتا تھا

ہزار بار بھی میں دیکھتا تھا نقش اس کے
تو واپسی پہ انھیں بھول جایا کرتا تھا

امیدِ دید سے پہلے ، مجھے نہیں معلوم
میں کس خوشی کے لیے غم اٹھایا کرتا تھا

اٹھایا کرتا تھا آواز ہر ستم کے خلاف
جہاں کوئی نہیں جاتا ، میں جایا کرتا تھا

اسی لیے تو مِرا کاٹنا ضروری تھا
میں رہ کے دھوپ میں اوروں پہ سایہ کرتا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آزار مِرے دل کا دل آزار نہ ہو جائے
جو کرب نہاں ہے وہ نمودار نہ ہو جائے

آواز بھی دیتی ہے کہ اٗٹھ جاگ مِرے لعل !
ڈرتی بھی ہے ‘ بچّہ کہیں بے دار نہ ہو جائے

جب تک میں پہنچتا ہٗوں کڑی دٗھوپ میں چل کر
دیوار کا سایہ پس ِ دیوار نہ ہو جائے

پردہ نہ سرک جائے کہیں اے دل ِ بے تاب !
وہ پردہ نشیں اور پٗراسرار نہ ہو جائے

بڑھتا چلا جاتا ہے زمانے سے تعلّق
یہ سلسلہ ۔۔۔ زنجیرِ گراں بار نہ ہو جائے

آرام سے رہتا ہی نہیں بندہؑ بے دام
جب تک کسی مشکل میں گرفتار نہ ہو جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر گھر میں اک ایسا کونا ہوتا ہے
جہاں کسی کو چھپ کر رونا ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنبھال رکّھی ہیں دامن کی دھجّیاں میں نے
اگست آیا تو پھر جھنڈیاں بناؤں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مِرے مزار پر آ کر دیے جلائے گا
وہ میرے بعد مری زندگی میں آئے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادتاً بھیک مانگتے ہیں لوگ
رزق اللہ کے اختیار میں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بعض وعدے کیے نہیں جاتے
پھر بھی ان کو نبھایا جاتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب راستے نہیں تھے میں بھٹکا کبھی نہ تھا
جتنا ہجوم میں ہوں اکیلا ، کبھی نہ تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک معصوم سا پرندہ بھی
اپنی جاگیر میں شکاری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اذاں پہ قید نہیں ، بندشِ نماز نہیں
ہمارے پاس تو ہجرت کا بھی جواز نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے آنسو کبھی نہیں رُکتے
میں ہمیشہ وضو سے ہوتا ہوں
۔۔۔۔
راستے میں پڑا ہوں میں
میرے ہاں سب کا آنا جانا ہے
۔۔۔۔۔
کچھ تصاویر بول پڑتی ہیں
سب کی سب بے زباں نہیں ہوتیں
۔۔۔۔۔
اسی طرح در و دیوار تنگ ہوتے رہے
تو کوئی اپنے لیے گھر نہیں بنائے گا
۔۔۔۔
پربت، جھیلیں، پھول بنا کر پنسل سے
کاغذ پر _____ کشمیر بناتا رہتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی تہمت ہو، مرے نام چلی آتی ہے
جیسے بازار میں ہر گھر سے گلی آتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
( سُنہری حلقہ )


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo