( خُورشیدؔ رِضوی ) 1۔ یہی ہے عشق کہ سَر دو ‘ مگر …

[ad_1] ( خُورشیدؔ رِضوی )

یہی ہے عشق کہ سَر دو ‘ مگر دُہائی نہ دو
وفُور ِ جَذب سے ٹُوٹو ‘ مگر سُنائی نہ دو

یہ دَور وہ ہے کہ بیٹھے رہو چراغ تَلے
سبھی کو بزم میں دیکھو ‘ مگر دِکھائی نہ دو

زمیں سے ایک تعلُّق ہے نا گُزیر مگر
جو ہو سکے تو اِسے رنگ ِ آشنائی نہ دو

شہَنشَہی بھی جو دل کے عِوَض مِلے تو نہ لو
فراز ِ کوہ کے بدلے بھی یہ تَرائی نہ دو

جواب ِ تُہمت ِ اَہل ِ زمانہ میں ‘ خُورشیدؔ !
یہی بہُت ہے کہ لب سی رکھو ‘ صفائی نہ دو !
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مَیں سوچتا تھا کہ وہ زخم بھر گیا کہ نہیں
کُھلا دریچہ ‘ دَر آئی صبا ‘ کہا کہ ” نہیں ”

ہَوا کا رُخ تو اُسی بام و دَر کی جانِب ہے
پہُنچ رہی ہے وہاں تک مِری صدا کہ نہیں

لبوں سے آج سَر ِ بزم آ گئی تھی بات
مگر وہ تیری نگاہوں کی اِلتجا کہ ” نہیں ”

زباں پہ کچھ نہ سہی ‘ سُن کے میرا حال ِ تباہ
تِرے ضمیر میں اُبھری کوئی دُعا کہ نہیں

خود اپنا حال سُناتے حجاب آتا ہے
ہے بزم میں کوئی دیرینہ آشنا کہ نہیں

ابھی کچھ اِس سے بھی نازُک مقام آئیں گے
کرُوں مَیں پھر سے کہانی کی اِبتداؑ کہ نہیں

پڑو نہ عشق میں خُورشیدؔ ! ہم نہ کہتے تھے
تُمہی بتاؤ کہ جی کا زِیاں ہُوا کہ نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ جو ننگ تھے ‘ یہ جو نام تھے ‘ مجھے کھا گئے
یہ خیال ِ پُختہ جو خام تھے ‘ مجھے کھا گئے

کبھی اپنی آنکھ سے زندگی پہ نظر نہ کی
وہی زاویے کہ جو عام تھے ‘ مجھے کھا گئے

مَیں عمِیق تھا کہ پَلا ہُوا تھا سکُوت میں
یہ جو لوگ محو ِ کلام تھے ‘ مجھے کھا گئے

وہ جو مجھ میں ایک اِکائی تھی ‘ وہ نہ جُڑ سکی
یہی ریزہ ریزہ جو کام تھے ‘ مجھے کھا گئے

وہ نگِیں جو خاتم ِ زندگی سے پِھسَل گیا
تو وہی جو میرے غُلام تھے ‘ مجھے کھا گئے

مَیں وہ شعلہ تھا ‘ جسے دام سے تو ضَرَر نہ تھا
پَہ جو وَسوَسے تَہہ ِ دام تھے ‘ مجھے کھا گئے

جو کُھلی کُھلی تھیں عداوتیں ‘ مجھے راس تھیں
یہ جو زہر خَند سلام تھے ‘ مجھے کھا گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کچھ پُھول تھے ‘ کچھ اَبر تھا ‘ کچھ باد ِ صبا تھی
کچھ وقت تھا ‘ کچھ وقت سے باہَر کی فَضا تھی

کچھ رنگ تھے ‘ کچھ دُھوپ تھی ‘ کچھ دَہشت ِ اَنجام
کچھ سانس تھے ‘ کچھ سانس میں خُوش بُوے فنا تھی

کچھ رنگ ِ شفَق تیز تھا ‘ کچھ آنکھ میں خُوں تھا
کچھ ذہن پہ چھائی تِرے ہاتھوں کی حِنا تھی

کچھ گُزری ہُوئی عُمر کی یادوں کا دُھواؑں تھا
کچھ آتے ہُوئے وقت کے قدموں کی صدا تھی

صدیوں سے دھڑَکتی ہُوئی اِک چاپ تھی دِل میں
ایک ایک گھڑی صُورت ِ نقش ِ کَف ِ پا تھی

دونوں کو وہی ایک بِکھر جانے کا ڈر تھا
مَیں تھا ‘ گُل ِ صد چاک تھا ‘ اُور تیز ہَوا تھی

خُورشیدؔ ! سَر ِ شام تَہہ ِ دامن ِ کُہسار
دِل تھا کہ وہی کوہ کی دیرینہ نِدا تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہِیں بھی صداے مقام ِ لب نہیں آ سکا
مَیں تِری صداے نِگَہ پَہ کب نہیں آ سکا

تِرے ہِجر ‘ تیرے وِصال ‘ اپنے خیال میں
کسی آئِنے میں ‘ مَیں سب کا سب نہیں آ سکا

تِرے قُرب میں مجھے مَوت یاد نہیں رہی
وہ سَحَر ہُوئی کہ خیال ِ شب نہیں آ سکا

جو تمام عُمر رہا سبب کی تلاش میں
وہ تِری نگاہ ِ میں بے سبب نہیں آ سکا

ہُوئی ایسے سایہ ء رَنج میں مِری تربیت !
کبھی کوئی وَسوَسہ ء طرَب نہیں آ سکا

یہ مِری متاع ِ گَراں ہَوا میں بِکھر گئی
مجھے اپنے سُوز ِ نہاں کا ڈَھب نہیں آ سکا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہُوا نہ تیری مہَک سے کبھی جُدا مِرا ہاتھ
چمن چمن تِرا دامن ‘ صبا صبا مِرا ہاتھ

میان ِ تِیرہ شبی اب بھی یاد آتا ہے
کسی کی ساعَد ِ سِیمِیں کو ڈھونڈتا مِرا ہاتھ

یہ فیض بھی تو اِنہی ظُلمتوں سے پایا ہے
کبھی کبھی مَہ ِ کامِل کو جا لگا مِرا ہاتھ

مِرے لہُو سے نہیں ‘ اِس کی باز گَشت سے ڈر
خروش ِ حشر ‘ تِرا دامن ِ قبا ‘ مِرا ہاتھ

زمیں کے تھامنے والے ! کرم ہے یہ بھی تِرا
دُعا کو ہاتھ اُٹھایا تو اُٹھ گیا مِرا ہاتھ

جو میرے دِل میں ہے خُورشیدؔ ! مجھ کو لکھنا ہے
بَلا سے آئے تَہہ خنجر ِ جفا مِرا ہاتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب کبھی خود کو یہ سمجھاتؤُں کہ تُو میرا نہیں
مجھ میں کوئی چیخ اُٹھتا ہے ” نہیں ‘ ایسا نہیں ”

کب نکلتا ہے کوئی ‘ دِل میں اُتر جانے کے بعد
اِس گلی کی دُوسری جانِب کوئی رستہ نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لب سے دِل کا ‘ دِل سے لب کا ربطہ کوئی نہیں
حسرتیں ہی حسرتیں ہیں ‘ مُدّعا کوئی نہیں

آنکھ مِیچو گے تو کانوں سے گزر آئے گا حُسن
سَیل کو دیوار و دَر سے واسطہ کوئی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کر رہا ہُوں ذرّہ ذرّہ ریگ ِ ساعَت کا شمار
زندگانی کا اسیر اُور مَوت کا دل دادہ ہُوں

اِتنا آساں ہُوں کہ جس کو ماننا آساں نہیں
ہے یہی پے چیدگی میری کہ حرف ِ سادہ ہُوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اَبرُوے اَبر سے کرتا ہے اشارہ مجھ کو
جھلَک اُس آنکھ کی دِکھلا کے ستارہ مجھ کو

رایگاں وُسعَتِ ویراں میں یہ کِھلتے ہُوئے پھول
اِن کو دیکھوں تو یہ دیتے ہیں سہارا مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر کو ہنس پڑیں گے کسی ایک بات پر
رونا تمام عُمر کا بے کار جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سفر نصیب ہیں ہم ‘ ہم کو منزِلوں سے کیا
یہی بہُت جو کجاوے کی ٹیک سے سو لیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری صورت میری تنہائی کے آئینے میں دیکھ
اَنجُمَن کی گَرد میں کس کو نظر اؤُں گا مَیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم بعد ِ مرگ بھی اگر آؤ تو مرحبا
بازو سَر ِ صلیب کُشادہ رکھیں گے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جمع اَحباب ہُوئے ‘ وقت کو زنجیر کرو
عُمر کٹ جائے ‘ یہ لمحہ نہ گزرنے پائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مَیں شب و رُوز کاحاصِل اُسے لَوٹا دوں گا
وقت اگر میرے کھلونے مجھے واپس کر دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو اگر شُکر کا رب ہے تو پھر اَے ربّ ِ کریم !
کیا شکایت کو کوئی خُدا ڈھونڈ کے لائیں ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر دَور ِ شباب یاد آیا
ڈھلوان پہ پھول کِھل رہے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس دریچے سے لگے بیٹھے رہے اہل ِ وطن
سبزہ چلتا رہا اُور یاد ِ وطن آتی رہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آہِستہ اِس لرزتے ہُوئے پَل پہ رکھ قدم
صدیوں کا اِنہدام تِرے نام ہی نہ ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی تو ہے پَس ِ دیوار ِ گُل ستاں ‘ جس کے
نظارہ جُو ہیں شجر ‘ ایڑھیاں اُٹھائے ہُوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم مجھ سے نہ مِل پاؤ گے ہرگِز کہ مِرے گِرد
دیوار ہی دیوار ہے ‘ دروازہ نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سِحر ایسا کہ مسَخَّر کرے گویائی کو
حُسن ایسا کہ پلَک سے نہیں لگتی ہے پلَک
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُن کانپتی پلکوں میں وہ نم ہوتی ہُوئی آنکھ
یُوں ‘ جیسے کسی جھیل پہ منڈلائیں پرندے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ سے محروم رہا میرا زمانہ ‘ خورشیدؔ !
مجھ کو دیکھا ‘ نہ کسی نے مجھے جانا ‘ خُورشیدؔ !
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

( اِنتظامیہ ” سُنَہری حلقہ ” )


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo