::: ولیم گولڈنگ : {William Golding} برطانوی فکشن …

[ad_1] ::: ولیم گولڈنگ : {William Golding} برطانوی فکشن نگار ڈرامہ نگار، شاعر اور اسکول ماسٹر :::
*** احمد سہیل ***
برطانوی ناول نگار ولیم { آمد: 19ستمبر۔۔۔ رخصت: 19 جون 1983} 1980میں بکر انعام، اور 1979 میں جیمز ٹیٹ بلیک میموریل انعام کے حق دار ٹہرے ولیم گولڈنگ کی تحریریں دنیا میں ہر ملک کو چھپ چکی ہیں ان کی تحریروں اور خاص کر ان کی ناولز کا 35 سے زائد زبانوں میں ترجمہ ہو چکا ہے. وہ 1988 ء میں ملکہ برطانیہ سے ناراض ہوگئے تھے،ں- وہ 12 ناولوں کے علاوہ، بہت سارے مضامین اور ادبی اور فکری جائزے، کئی مختصر کہانیاں، کچھ نظمیں، اور اس کے علاوہ مصر کے بارے میں سفر نامہ بھی شامل ہے۔ ولیم گولڈنگ نے فلم میں اداکاری بھی کی ہیں. ان کے ادبی کاموں پر بہت لکھا گیا ہے۔ . 1911 میں کنورول میں پیدا ہوئے، ولیم کی بچپن سے یہ خواہش تھی کی وہ مصنف بنیں . ان کا پہہلی کتاب اس وقت چھیی جب ان کی عمر بیس سال تھی.۔ وہ 1940 برطانوی شاہی بحریہ میں فرائض سرنجام دے چکے ہیں۔ میں 1988 میں ان کو ملکہ انگلستاان کی جانب سے ” نائٹ” کا خطاب ملا۔ اور ” سر ” کہلائے گئے۔ وہ رائل سوسائٹی آف لٹریچر کے فیلو بھی رہے چکے ہیں۔ 1983 میں ان کو اب کا نوبیل انعام دیا گیا۔ ان کی تحریروں میں انسانی بقا اور جدوجہد، مہم جوئی، سمندری اسفار، سائنس اور تاریخی فکشن اور مضامین ملتے ہیں۔ ان کی بیوی کانام این بروک فیلڈ {1913۔ 1995} ہے۔ جو پیشے کے اعتبار سے تجزیاتی کیمیا دان تھی۔ ان کی دو اولادیں ہیں ا ن کے نام ڈیور اور جوڈتھ ہیں۔ میں نے ” ولیم گولڈنگ” کے عنوان سے ایک مضمون لکھا تھا۔ شاید یہ اردو میں ان کا پہلا تعارف تھا۔ جو علی گڑھ، بھارت کے ادبی جریدے “الفاظ” کی مارچ 1984 کی اشاعت میں شامل تھا۔ اور راقم الحروف نے ولیم گولڈنگ کا ایک اسیکیچ بھی بنایا تھا جو اس مضمون کے ساتھ دے رہا ہوں۔
1954 میں ان کی مشہور ناول “لارڈ آف دی فلائز”{Lord of the Flies, } چھپی ۔ اس ناول،کو 21 بار مسترد کیا گیا اور یہ چھپ نہ سکی۔ ۔ ولیم گولڈنگ کے ناول ’لارڈ آف دی فلائیز‘ کے نٹ کھٹ لڑکے نظر آتے ہیں۔اس ناول میں ایک جہاز ایک جزیرے میں کریش لینڈنگ کرتا ہے جس میں اسکولوں کے بچے موت سے بچ جاتے ہیں۔ ان میں سے تین تگڑے بچے باقی بچوں کی قیادت سنبھالتے ہیں۔ ان تین میں سے رالف زیادہ تگڑا ہے۔ بچوں میں سب سے سمجھ دار بچہ ایک موٹا سا عینکو ’پگی‘ ہے جس کی شکل و شباہت کسی ہیرو جیسی نہیں اس لیے بچوں کی جمہوریہ میں اسے قائد منتخب کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ پگی کے سمجھانے بجھانے کے باوجود تگڑے بچوں کی بے اعتدالیاں جاری رہتی ہیں اور بچوں کی جمہوریہ کا کام تمام ہو جاتا ہے۔ جس میں مصنف کا مقصد معاشرتی تہذیب سے کٹ جانے کی صورت میں انسان کے رویے اور کردار پر اثرات کی عکاسی کرنا ہے۔ گولڈنگ کے مطابق ریاست کے وجود کے بغیر انسان کو تہذیب میں باندھنا ناممکن ہے۔ گولڈنگ کا کہنا کہ انسان اس وقت تک مہذب ہے جب تک کہ اس کو قانون، سزا اور احتساب کی صورت میں جدید معاشرے کی اقدار نے اپنے اندر باندھ کر رکھا ہو۔ جہاں اس کا ربط ان چیزوں سے ٹوٹے گا، اس کا رشتہ تہذیب سے بھی ٹوٹ جائے گا۔ وہ ایک بے قابو جارحیت سے بھرپور ہجوم کے جیسا رویہ اختیار کر لے گا۔ ایسے میں انسان گندگی میں اترتا چلا جائے گا یہاں تک کہ اس کا باطن پول پر ٹنگے بھنبھناتی مکھیوں والے اس جنگلی جانور کے سر کی مانند تعفن زدہ نہ ہوجائے۔
وہ مفروضے پر تشکیل دیا ہوا ایک جنگل تھا۔ یہ دو ہزار سترہ کے شہری مرکز کی ایک درسگاہ ہے۔ وہاں کمسن شعور لیے ہوئے نابلد بچے ہوتے ہیں ۔ یہاں عاقل و بالغ اعلیٰ تعلیم کے زیور سے آراستہ نوجوان ہیں۔ وہاں شکار بھوک مٹانے کا بہانہ تھا، یہاں خون کی پیاس بجھانے کے سوا کچھ اور نہیں۔ وہاں بے زبان جانور کو ڈنڈوں سے ہانکا جا رہا تھا، یہاں زبان رکھنے والے ایک جیتے جاگتے انسان کو ہانکا گیا، مکوں سے، لاتوں سے، ڈنڈوں سے دھنائی جاتی ہے یہاں تک کے اس کا دم نکل گیا۔ لیکن پھر بھی بس نہ ہوئی۔۔۔ کیوںکہ مسئلہ تو اس کے بعد شروع ہوتا ہے۔
ادب کے نوبل انعام یافتہ برطانوی ادیب ولیم گولڈنگ کی ذاتی ڈائری میں انکشاف کیا گیا ہے کہ انہوں نے پندرہ سالہ لڑکی سے زیادتی کی کوشش کی مگر اس میں کامیاب نہیں ہو سکے۔
برطانوی اخبار سنڈے ٹائمز کے مطابق ولیم کا یہ اقبالی بیان ان کے غیر مطبوعہ ڈائری میں ملا ہے۔ ڈائری کے غیر مطبوعہ نسخے میں ولیم نے اپنی اہلیہ کو مخاطب کیا ہے اور اس اعتراف کے ذریعے انہیں اپنی شخصیت میں پروان چڑھنے والے وحشیانہ پن کی بابت آگاہ کیا ہے۔
:: ان کی کتابوں کی فہرست کچھ اس طرح بنتی ہے::
Poems (1934)
Drama
The Brass Butterfly (1958)
Novels
Lord of the Flies (1954)
The Inheritors (1955)
Pincher Martin (1956)
Free Fall (1959)
The Spire (1964)
The Pyramid (1967)
The Scorpion God (1971)
Darkness Visible (1979)
The Paper Men (1984)
To the Ends of the Earth (trilogy)
Rites of Passage (1980)
Close Quarters (1987)
Fire Down Below (1989)
The Double Tongue (posthumous publication 1995)[
Non-fiction
The Hot Gates (1965)
A Moving Target (1982)
An Egyptian Journal (1985)
{احمد سہیل}
********************


بشکریہ

::: ولیم گولڈنگ : {William Golding} برطانوی فکشن نگار ڈرامہ نگار، شاعر اور اسکول ماسٹر :::*** احمد سہیل *** برطانوی …

Posted by Ahmed Sohail on Tuesday, January 16, 2018

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo