آج 13 اگست:-: مشہور و معروف شاعر، نقاد اور ادیب سی…

[ad_1] آج 13 اگست:-: مشہور و معروف شاعر، نقاد اور ادیب سید سجاد باقرؔ رضوی کی برسی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نام سید سجاد باقر رضوی، تخلص باقر تھا۔4؍اکتوبر 1928 کو گاؤں چمانواں، تحصیل پھول پور، ضلع اعظم گڑھ میں پیدا ہوئے۔ میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کے امتحانات یوپی بورڈ سے پرائیوٹ امیدوار کی حیثیت سے پاس کیے۔ اکتوبر 1947 میں ہجرت کرکے پاکستان چلے گئے۔1949 میں سندھ مسلم لا کالج سے ایل ایل بی ، اور کراچی یونیورسٹی سے بی اے (آنرز) کیا۔ 1958 میں سجاد باقر نے کراچی یونیورسٹی سے ’’طنز ومزاح کے نظریاتی مباحث اور کلاسیکی اردو شاعری 1957 تک‘‘ پر مقالہ لکھ کر پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔ شاعری کا ذوق فطری تھا۔ شاعر کے علاوہ وہ نقاد اور انگریزی و اردو ادب کے ایک اچھے استاد تھے۔ 13؍اگست 1992 کو دمے کے مرض میں لاہور میں انتقال کرگئے۔ ’’تیشۂ لفظ‘‘ اور ’’جوئے معانی‘‘ کے نام سے ان کے شعری مجموعے چھپ گئے ہیں
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بقدرِ حوصلہ کوئی کہیں، کوئی کہیں تک ہے!
سفر میں راہ و منزل کا تعین بھی یہیں تک ہے

نہ ہو انکار تو اثبات کا پہلو ہی کیوں نکلے
مرے اصرار میں طاقت فقط تیری نہیں تک ہے

اُدھر وہ بات خوشبو کی طرح اڑتی تھی گلیوں میں
اِدھر میں یہ سمجھتا تھا کہ میرے ہم نشیں تک ہے

نہیں کوتاہ دستی کا گلہ اتنا غنیمت سے
پہنچ ہاتھوں کی اپنے، اپنے جیب و آستیں تک ہے

سیاہی دل کی پھوٹے گی تو پھر نس نس سے پھوٹے گی
غلامو ! یہ نہ سمجھو داغِ رسوائی جبیں تک ہے

پھر آگے مرحلے طے ہو رہیں گے ہمتِ دل سے
جہاں تک روشنی ہے، خوف تاریکی وہیں تک ہے

الٰہی بارش ابرِ کرم ہو فضل دونی ہو ! !
کہ باقر کی تو آمد بس اسی دل کی زمیں تک ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گلیاں جھانکیں سڑکیں چھانیں دل کی وحشت کم نہ ہوئی
آنکھ سے کتنا لاوا ابلا تن کی حدت کم نہ ہوئی

ڈھب سے پیار کیا ہے ہم نے اس کے نام پہ چپ نہ ہوئے
شہر کے عزت داروں میں کچھ اپنی عزت کم نہ ہوئی

من دھن سب قربان کیا اب سر کا سودا باقی ہے
ہم تو بکے تھے اونے پونے پیار کی قیمت کم نہ ہوئی

جن نے اجاڑی دل کی کھیتی ان کی زمینیں ختم ہوئیں
ہم تو رئیس تھے شہر وفا کے اپنی ریاست کم نہ ہوئی

اب بھی اتنا تر و تازہ ہے جیسے اول دن کا ہو
واہ رے اپنی کاوش ناخن زخم کی لذت کم نہ ہوئی

باقرؔ کو تم خوب سمجھ لو رنجش ہے یہ دکھاوے کی
یوں تم سے بے زار پھرے ہے دل سے چاہت کم نہ ہوئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج کیوں چپ چپ ہو باقرؔ تم کبھی مشہور تھے
دوستوں یاروں میں اپنی خوش بیانی کے لیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نظم
رات
آندھیاں آسمانوں کا نوحہ زمیں کو سناتی ہیں
اپنی گلو گیر آواز میں کہہ رہی ہیں،
درختوں کی چنگھاڑ
نیچی چھتوں پر یہ رقص آسمانی بگولوں کا
اونچی چھتوں کے تلے کھیلے جاتے ڈرامہ کا منظر ہے
یہ اس ظلم کا استعارہ ہے
جو شہ رگ سے ہابیل کی گرم و تازہ لہو بن کے ابلا ہے
آندھیوں میں تھا اک شور کرب و بلا
اور میں نے سنا کربلا ۔۔۔۔ کربلا
بند آنکھوں میں وحشت زدہ خواب اترا
صبح اخبار کی سرخیاں بن گیا

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی(بھٹکلی)


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo