بلا عنوان…..ڈاکٹر صابرہ شاہین -مکالمہ

جھوٹ کی شال اڑھانے کی خواہش تھی اس کی

میں بھی جانچنے اور پرکھنے کی کو شش میں

اس کی فرضی جنت کے دالان میں اتری تو یہ دیکھا

اک اک پھول ہر ایک کیاری وحشت کے ننگے پن کی زنجیر میں جکڑےچیخ رہے تھے

زخمی کلیاں پات بھی پیلے شاخیں بھی سب سوکھ چلی تھیں

اس عالم میں سوچ کے پکھڑو نےپھر اپنے پر پھیلائے

تن کرایک آڈاری ماری اڑتے اڑتے دور فلک سے دور کہیں پھر نیلی بستی میں جا اترا

وہ کیچڑ زادہ کہ اب بھی لوبھ کے پشمینے کی چادر

اپنے ہی کاندھے پر رکھےسوچ رہا ہے

شرمندہ سا کھوج رہا ہے دور خلا میں




بشکریہ

جواب چھوڑیں

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo