تضمین بر غزل مرزا نوشہ از مرزا عزیز بیگ جفاۓ یار …

[ad_1] تضمین بر غزل مرزا نوشہ
از مرزا عزیز بیگ

جفاۓ یار تسلّی ھے اِک جہاں کے لیے
خبر خوشی کی ھے آزادی و اماں کے لیے
ھُوئ ھے وجہء تسلّی دِلِ تپاں کے لیے
نویدِ امن ھے بیدادِ دوست جاں کے لیے
رہی نہ طرزِ سِتم کوئی آسماں کے لیے

غذاۓ غم تو دِلِ بےقرار و مَحزُوں ھے
جِگر کی تاک میں وہ دیدہء پُرافسُوں ھے
پڑی وہ لُوٹ کہ حالت مری دِگرگُوں ھے
بلا سے گر مِژہء یار تشنہء خُوں ھے
رکھّوں کُچھ اپنی ہی مِژگانِ خُوں فشاں کے لیے

خطا معاف یہ ھے اِلتِماسِ خلق اے خِضر
تُمھیں نہیں ھے ذرا بھی تو پاسِ خلق خِضر
چُھپے ھو تُم یہ تُمھیں ھے ہراسِ خلق اے خِضر
وہ زِندہ ھم ہیں کہ ہیں رُوشناسِ خلق اے خِضر
نہ تُم کہ چور بنے عُمرِ جاوداں کے لیے

یہاں تلک مِرے دِل میں ھُوئ ھے کثرتِ رشک
کہ بات بات سے ظاہر ھے اب علامتِ رشک
کِسی کو غیر کی راحت پہ ھوگی عادتِ رشک
رہا بلا میں بھی میں مُبتلائے آفتِ رشک
بلائے جاں ھے ادا تیری اِک جہاں کے لیے

وہ کشتنی کہ جو قاتِل سے رات دِن ہیں قریں
اُنھِیں کو اُس سے جُدا کر کہ ھو مُجھے تسکیں
کبھی تو دُور سے ھو آزمائش اُن کی کہِیں
فلک نہ دُور رکھ اُس سے مُجھے کہ مَیں ہی نہیں
دراز دستیِ قاتل کے اِمتِحاں کے لیے

پڑا ھُوا تو ھُوں زنداں میں بستہء زنجیر
قرینہ یہ تھا کہ کرتا نجات کی تدبیر
مگر مُجھے تو یہ دُھن ھے کہ گھر کرُوں تعمیر
مثال یہ مِری کوشش کی ھے کہ مُرغِ اسیر
کرے قفس میں فراہم خس آشیاں کے لیے

پڑا ھُوا تھا مَیں دُھونی اُس آستاں پہ رماۓ
اِس آرزُو میں کہ دربان کو ترس آجاۓ
اُسے بھی کوئ خُصُومت نہ تھی کہ مُجھ کو اُٹھاۓ
گدا سمجھ کے وہ چُپ تھا مِری جو شامت آئے
اُٹھا اور اُٹھ کے قدم میں نے پاسباں کے لیے

سُخن میں چاہیے کوئ جدید طرزِ عمل
کہ طبعِ تیز کا کُچھ حوصلہ تو جاۓ نِکل
نہ کیوں ھو حدّ ِ تغزُّل میں رہ کے جی بےکل
بہ قدرِ شوق نہیں ظرفِ تنگنائے غزل
کُچھ اور چاہیے وسعت مِرے بیاں کے لیے

مِلا ھے جو طربِ عیش اُس کو قِسمت سے
بھلا وہ اُس کے سوا ھے نصیب اور کِسے
مِٹا دیا حسد و رشک کو بھی قُدرت نے
دیا ھے خلق کو بھی تا اُسے نظر نہ لگے
بنا ھے عیش تجمُّل حسین خاں کے لیے

یہ ذکرِ خیر مِرے لب پر آگیا کِس کا
بھرا سُرُور سے دِل اور جِگر ھُوا ٹھنڈا
مُجھے بیاں پر اپنے ھے وجد کیوں اِتنا
زباں پہ بارِ خُدایا یہ کِس کا نام آیا
کہ میرے نُطق نے بوسے مِر ی زباں کے لیے

اُسی کی شان کے شایاں ھے شان و شوکت و ملک
اُسی واسطے موزُوں ھے جاہ و حشمت و ملک
رہے ہمیشہ یوں ہی برقرار ثروت و ملک
نصیرِ دولت و دیں اور معینِ ملّت و ملک
بنا ھے چرخِ بریں جس کے آستاں کے لیے

ہر اِک بشر کے لیے عیش کی ھے افزائش
خدا کے فضل سے آیا ھے دَور اسائش
نئے طریق سے ہر شے کی ھو زیبائش
زمانہ عہد میں اُس کے ہھے محوِ آرائش
بنیں گے اور ستارے اب آسماں کے لیے

ابھی تو مدح کی تمہید و اِبتدا ہی ھے
نہ مدح لکھی گئی ھے نہ مَیں نے لکھی ھے
ابھی کہاں مِری طبع رسا نے بس کی ھے
ورق تمام ھُوا اور مدح باقی ھے
سفینہ چاہیے اُس بحرِ بیکراں کے لیے

عجب ڈھنگ نِکالا مدح گوئ کا
غزل سی شے میں دکھایا ھے اِس نے رنگ نیا
طبیعت اِس کی ھے جِدّت پسند اے مرزاؔ
ادائے خاص سے غالبؔ ھُوا ھے نُکتہ سرا
صلائے عام ھے یارانِ نُکتہ داں کے لیے۔۔۔!
…………………
تضمین بر اشعارِ غالبؔ
از ناصرؔ کاظمی

یہ کون طائر سِدرہ سے ھم کلام آیا
جہانِ خاک کو پِھر عرش کا سلام آیا
جبیں بھی سجدہ طلب ھے یہ کیا مقام آیا
زباں پہ بارِ خُدایا یہ کِس کا نام آیا
کہ میرے نُطق نے بوسے مِری زباں کے لیے

خطِ جبیں تِرا اُمّ الکِتاب کی تفسِیر
کہاں سے لاؤں تِرا مِثل اور تیری نظِیر
دِکھاؤں پیکرِ الفاظ میں تِری تصوِیر
مثال یہ مِری کوشش کی ھے کہ مُرغِ اسِیر
کرے قفس میں فراہم خس آشیاں کے لیے

کہاں وہ پیکرِ نُوری کہاں قبائے غزل
کہاں وہ عرشِ مکیں اور کہاں نوائے غزل
کہاں وہ جلوہء معنی کہاں رِدائے غزل
بقدرِ شوق نہیں ظرفِ تنگنائے غزل
کُچھ اور چاہیے وُسعت مِرے بیاں کے لیے

تھکی ھے فِکرِ رسا اور مدح باقی ھے
قلم ھے آبلہ پا اور مدح باقی ھے
تمام عُمر لکھا اور مدح باقی ھے
ورق تمام ھُوا اور مدح باقی ھے
سفینہ چاہیے اِس بحرِ بیکراں کے لیے۔۔۔!
…..
غالبؔ
نویدِ امن ھے بیدادِ دوست جاں کے لیے
رہی نہ طرزِ سِتم کوئی آسماں کے لیے

بَلا سے گر مِژہء یار تشنہء خُوں ھے
رکھّوں کُچھ اپنی ہی مِژگانِ خُوں فشاں کے لیے

وہ زندہ ھم ہیں کہ ہیں رُوشناسِ خلق اے خِضر
نہ تُم کہ چور بنے عُمرِ جاوداں کے لیے

رہا بَلا میں بھی مَیں مُبتلائے آفتِ رشک
بَلائے جاں ھے ادا تیری اِک جہاں کے لیے

فلک نہ دُور رکھ اُس سے مُجھے کہ مَیں ہی نہیں
دراز دستیِ قاتل کے اِمتِحاں کے لیے

مثال یہ مِری کوشش کی ھے کہ مُرغِ اسیر
کرے قفس میں فراہم خس آشیاں کے لیے

گدا سمجھ کے وہ چُپ تھا مِری جو شامت آئے
اُٹھا اور اُٹھ کے قدم میں نے پاسباں کے لیے

بہ قدرِ شوق نہیں ظرفِ تنگنائے غزل
کُچھ اور چاہیے وُسعت مِرے بیاں کے لیے

دیا ھے خلق کو بھی تا اُسے نظر نہ لگے
بنا ھے عیش تجمُّل حسین خاں کے لیے

زباں پہ بارِ خُدایا یہ کِس کا نام آیا
کہ میرے نُطق نے بوسے مِر ی زباں کے لیے

نصیرِ دولت و دیں اور مُعینِ ملّت و ملک
بنا ھے چرخِ بریں جِس کے آستاں کے لیے

زمانہ عہد میں اُس کے ہھے محوِ آرائش
بنیں گے اور سِتارے اب آسماں کے لیے

ورق تمام ھُوا اور مدح باقی ھے
سفینہ چاہیے اُس بحرِ بیکراں کے لیے

ادائے خاص سے غالبؔ ھُوا ھے نُکتہ سرا
صلائے عام ھے یارانِ نُکتہ داں کے لیے۔۔۔


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo