#hamidnaved انٹرنیٹ اورمحبت (ڈاکٹر محمد عقیل صاحب…

[ad_1] #hamidnaved
انٹرنیٹ اورمحبت
(ڈاکٹر محمد عقیل صاحب کی ایک انتہائی اہم تحریر)

یوں تو مردو عورت میں محبت کی تاریخ بہت پرانی ہے لیکن انٹرنیٹ آنے کے بعد عشق و محبت کی نئی داستانیں رقم ہوئی ہیں۔اجنبی مردو عورت کا محبت کرنا جائز ہے یا ناجائز، یہ ایک الگ موضوع ہے۔ لیکن محبت کی کچھ قسمیں ایسی ہیں جن میں جواز کا کوئی امکان مذہب ومعاشرہ فراہم نہیں کرتا۔ ان میں سر فہرست تو شادی شدہ شخص کا کسی نامحرم کے ساتھ عشق و محبت میں گرفتار ہوجانا یا غیر محتاط گفتگو کرنا ہے۔ دوسرا معاملہ خفیہ طریقے سے بات چیت، ملاقات، تصاویر کا تبادلہ، ہنسی مذاق، شعرو شاعری اور رابطہ قائم کرنا ہے۔
جدید تحقیق کے مطابق سوشل میڈیا جس میں فیس بک سر فہرست ہے اس کی بنا پر دنیا بھر میں بے شمارے طلاقیں ہوچکیں اور بے شما ر گھرانے تباہ ہوئے ہیں۔ اس کے علاوہ بلیک میلنگ نے بھی گھریلو زندگی میں دراڑیں ڈالیں اور لوگوں کا سکون برباد کیا ہے۔ اصل میں لوگ تفریح ہی تفریح میں بات چیت کرتے چلے گئے اور معاملات پھر ان کے قابو سے باہر نکل گئے۔ پھر جب پیچھے ہٹنے لگے تو فریق ثانی ضد پر آگیا اور اوچھے ہتھکنڈے استعمال کرناشروع کردئیے۔ کبھی دل پر قابو نہ رہا، کبھی پیچھے ہٹنے سے قبل ہی کسی کو علم ہوگیا اور یوں فیس بک نے ناجائز محبت کرنے والوں کا چہرہ ساری زندگی کے لئے داغدار کردیا۔
جن کے ساتھ ہو ا سو ہوا لیکن یہ کہیں ہمارے ساتھ نہ ہوجائے ، کہیں ہماری اولاد اس سے متاثر نہ ہوجائے ، کہیں ہمارے دوست احباب اس مشکل میں نہ پڑ جائیں۔ کہیں ہم خود ہی اس مصیبت کا شکار نہ ہوجائیں۔ اس کے لیے ہمیں ان وجوہات کو جاننا پڑے گا جس کی بنا پر ایک شخص کسی دوسرے سے کسی معاملے میں ملوث ہوتا ہے۔
انسانوں میں چاہے جانے کی ایک بڑی شدید خواہش ہوتی ہے۔ کوئی اس کی جھوٹی تعریف بھی کردے تو انسا ن اسے جھوٹ جاننے کے باوجود اس سے محضوظ ہونا کوئی مسئلہ نہیں سمجھتا ۔ اسی کے ساتھ ساتھ اس کے دل میں تعریف کرنے والے شخص کے لیے ہمدردی اور لگاؤ کے جذبات پیدا ہوجاتے ہیں۔ جواب میں اس کی تعریف کرنا ایک اخلاقی فرض معلوم ہوتا ہے۔
اگلا مرحلہ تنہائی میں چیٹ کا ہوتا ہے۔ ان باکس میں چیٹ سے وہ پرائیویسی لمحوں میں مل جاتی جو قدیم زمانے میں چاہنے والوں کو ہزار جَتنوں کے بعد میسر آتی تھی۔ ابتدا میں ضروری نہیں کہ عشق کی باتیں ہی ہوں۔ بس ادھر ادھر کی باتیں ، باتوں سے باتیں۔ اگلا مرحلہ اس نئے بننے والے رشتے کو نام دینے کا ہوتا ہے۔ اسے دوست یا کولیگ ، پاکیز ہ محبت وغیرہ سے موسوم کردیا جاتا ہے۔ کچھ مذہبی لوگ اسے کیموفلاج کرنے کے لیے منہ بولے بہن بھائی کے رشتے کا نام دے دیتے ہیں۔
اس کے بعد قدرت کا قانون اپلائی ہونا شروع ہوجاتا ہے۔
۔
اگر بدقسمتی سے کسی ایک فریق کا دل بھرجائے یا اسے عقل آجائے یا اس کی ترجیحات بدل جائیں تو دوسرے فریق کی حالت ابتر ہوجاتی ہے۔اس کی طلب بے چینی اور بے چینی ڈپریشن ، پاگل پن، جنون یا انتقامی جذبے میں بدل جاتا ہے۔ اس کا اثر صرف دو افراد ہی نہیں دو خاندانوں پر پڑتا ہے۔ اس کا انجام کچھ بھی ہوسکتا ہے۔
اس تجزیے میں جو باتیں بیان کی گئی ہیں وہ سب کے سب امکانات ہیں یعنی ایسا ہوسکتا ہے لیکن ضروری نہیں کہ سب لوگوں کے ساتھ ایسا ہی ہو۔ عین ممکن ہے کہ کہیں محبت ہی پیدا نہ ہوپائے، کہیں معاملات ابتدائی سطح تک ہی محدود رہیں اور کہیں محبت واقعی ان جائز حدود کو سامنے رکھ کر کی گئی ہو جس کا انجام جائز نکاح کی صورت میں نکلے۔ لیکن اس قسم کے معاملات کا تناسب نہ ہونے کے برابر ہے۔ زیادہ تر لوگ تو سوشل میڈیا کا استعمال کرتے ہی اس بنا پر ہیں۔ کچھ لوگوں نے اپنے تجربات شئیر کیے کہ انہوں نے لڑکی کی جعلی آئی ڈی بناکر کچھ معتبر لوگوں سے تعلق قائم کیا اور انہیں اپنی جانب لبھایا۔ تو وہ بھی اسی جال میں باآسانی پھنس گئے جس میں نوعمر لوگ پھنستے ہیں۔
اب کیا کیا جائے؟ جو لوگ غیر سنجیدہ ہیں اور جن کی زندگی کا مقصد محض تفریح اور انٹرٹینمنٹ ہی ہے ، انہیں تو کسی قسم کی تلقین کرنا لَایعنی ہے۔ البتہ وہ لوگ جو واقعی اس دلدل میں پھنس چکے ہیں یا پھنس رہے ہیں انہیں متنبہ کیا جاسکتا اور اس کا حل بتایا جاسکتا ہے۔
اس قسم کے معاملات کا سب سے اہم دروازہ کمیونکیشن ہے۔ جب ایک لڑکی یا لڑکا کسی نامحرم سے بلاوجہ بات کرتا ہے تو اس کی باتیں اس کے دماغ کے ایک کونے میں جمع ہونا شروع ہوجاتی ہیں۔یہ باتیں یادیں بنتی اور پھر انڈے بچے دینا شروع ہوجاتی ہیں۔ خیالی پلاؤ اور تصور ان یادوں کے ذخیرے کو دوآتشہ کردیتے ہیں۔ تو اس معاملے سے نجات کا سب سے پہلا کام یہ ہے کہ ہر قسم کی کمیونکیشن پر چیک لگایا جائے۔ اگر آپ اس قسم کے کس افئیر میں مبتلا نہیں ہوئے ہیں تو چیک ضرور لگادیں ۔ کسی بھی نامحرم سے بے تکلف ہوکر بات کرنے سے گریز کریں۔ ان باکس میں چیٹ نہ کریں، اپنے موبائل کا پاسورڈ نہ رکھیں اور جب چاہیں آپ کے شوہر، بیوی، باپ ، بھائی اسے چیک کرلیں الا یہ کہ کوئی دفتری یا دیگر مجبوری درپیش ہو۔
اگر آپ اس مصیبت میں گرفتار ہوچکے ہیں تو سب سے پہلے تو یہ دیکھیں کہ آیا آپ کے تعلق کا انجام جائز ہوسکتا ہے یا نہیں۔جائز سے مراد یہ کہ اگر آپ دونوں کا نکاح ممکن ہے اور سوسائٹی کو کوئی اعتراض نہیں تو پھر اس کی کوشش کرلیں اور اس قسم کے خفیہ تعلق کو چھوڑ دیں۔ اگر نکاح ممکن نہیں یعنی فریقین میں سے کوئی ایک بھی شادی شدہ ہے تو اپنی جھوٹی سچی تمام تعریفوں کو یکسر نظر انداز کیا جائے۔ بات چیت یارابطہ کسی بھی قسم کا ہو اسے ختم کردیں تو ابتدا میں وحشت ضرور ہوگی لیکن وقت کا مرہم اس خلا کوپُر کردے گا۔
اس معاملے میں یہ کم ہوتا ہے کہ دونوں فریقوں کو ایک ساتھ عقل آئے ۔ چنانچہ جب ایک فریق پیچھے ہٹتا ہے تو دوسرا فریق اسے واپس کھنچنے کی پوری کوشش کرتا ہے۔ وہ روتا ہے ، چلاتا ہے، کبھی بیمار پڑ کر لبھاتا ہے، کبھی جذباتی بلیک میلنگ کرتا ہے، کبھی غصہ دکھاتا ہے ، کبھی دھمکیاں دیتا ، کبھی وعدے وعید یاد دلاتا تو کبھی طعنے دیتا ہے۔ اس متاثرہ فریق کے درد کا علاج اس کی کاؤنسلنگ نہیں ہوتی کیونکہ کاؤنسلنگ میں دوبارہ وہی کمییونکیشن بحال ہوجاتی اور ہارمونز کا رْکا ہوا اخراج شروع ہوجاتا ہے۔ اس کا واحد علاج اسٹینڈ لے لینا، پیچھے مڑ کر نہ دیکھنا اور ہر قسم کی کمیونکیشن پر پابندی لگادینا ہوتاہے۔
کم عمر لڑکیاں سب سے زیادہ اپنی عزت اور بدنامی سے ڈرتی ہیں۔اس کی بنا پر وہ کسی غلطی کا ارتکاب کرنے کے بعد اسی کے ہاتھو ں بلیک میل ہوتی چلی جاتی ہیں۔ حالانکہ انہیں فورا اپنے ماں باپ کو اعتماد میں لے کر ساری صورت حال بتادینی چاہئے۔ ماں باپ غصہ تو ہوں گے لیکن تجربہ کار ہونے کی بنا پر بات سنبھال لیں گے ۔
سوال یہ ہے کہ یہ کس طرح پتا چلا کہ ایک مرد یا عورت کسی سے باتوں ہی باتوں میں محبت و عشق میں مبتلا ہوچکا ہے۔ اس کا ایک چھوٹا سا ٹیسٹ ہے۔ اگر آپ کا بلاوجہ کسی خاص نامحرم شخص سے بات کرنے کا جی چاہے، اس سے بات کرنے میں لذت ملے، بات نہ ہونے پر رنج ہو، یاد ستائے، بیماری لاحق ہوجائے، ذہنی خلجان ہو تو سمجھ لیں کہ آپ پر اوکسی ٹائسین نامی ہارمون حملہ آور ہوچکا۔ اس کا علاج وہی ہے جو اوپر بتایا۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo