دو قومی نظریہ

دو قومی نظریہ دراصل قیام پاکستان کی بنیاد ہے اور یہ نظریہ سو فیصد درست ہے، قیام پاکستان کے پسِ منظر میں جھانکیں تو ہمیں دو قومی نظریے کی تفصیل، تعریف ، صحیح معنوں میں افادیت جھلکتی نظر آتی ہے ، دو قومی نظریے ہی دراصل نظریہ پاکستان ہے
نظریہ پاکستان وہ مطمح نظر ہے جسکی بنیاد ایک مخصوص نظریے یعنی اسلام پر رکھی گئی ہے جو اپنی تہذیب و ثقافت ، اقدار و روایات اور اپنا سیاسی و معاشی نظام فکر رکھتاہے برصغیر پاک وہند کے مسلمانوں کو اپنی شناخت اور پھر دو قومی نظریے کی بنیاد پر جداگانہ ریاست کی ضرورت یوں محسوس ہوئی کہ ان کے ساتھ موجود ایک دوسرے نظریے کے حامل افرادجومسلمانوں کے توحید اور انسانی مساوات کے نظریہ حیات کے برعکس بت پرستی اور ذات پات کے قائل تھے ، انہیں اپنے اندر جذب کر کیاپنے نظام ِ فکر و عمل کا حصہ بنانا چاہتے تھے ، لیکن اس کے برعکس اس خطے میں بسنے والی ملتِ اسلامیہ اپنے قومی تشخص اور علیحدہ شناخت کو چھوڑنے کیلئے کسی صورت تیار نہ تھی، یہ ملت اسلامیہ اپنے نظام فکر کو قائم رکھنا چاہتی تھی بلکہ عملی طور پر اس کے ظہور کی قائل تھی دونوں قوموں کے درمیان یہی امتیازی خصوصیات دو قومی نظریے کی بنیاد ہیں جو محض نظریہ ہی نہیں بلکہ روز مرہ پیش آنے والی حقیقت ہے ، یہی وجہ تھی کہ مسلمانوں نے ایسے علاقوں پر مشتمل علیحدہ ریاست کا مطالبہ کیا ، جن میں مسلمان اکثریت میں تھے۔
ظاہر ہے کہ جب مسلمان اپنی جداگانہ تہذیب و اقدار اور مذہب و روایات کے لحاظ سے ایک مختلف تشخص کے حامل تھے تو انہیںاپنا تشخص برقرار رکھنے کے لئے ضروری تھا کہ آئے دن کے نظریاتی ، مذہبی، معاشرتی اور اقتصادی تصادم سے نجات حاصل کریں ، یہی علیحدہ تشخص کی خواہش دو قومی نظریے کی اصل ہے ۔
یعنی برصغیر جنوبی ایشیاء میں مسلمان ہر لحاظ سے ایک علیحدہ شناخت اور پہچان کی حامل قوم ہے جس کا کوئی انگ، رنگ، ڈھنگ ہندووں سے مشابہت نہیںرکھتا ، اسی دو قومی نظریے کی بنیاد پر مسلمانوں نے ایک الگ وطن کا مطالبہ کیا،
افراد کا ایسا گروہ جس کا کوئی مقصد ہو ، قوم کہلاتا ہے اور مسلمان ایک ایسی قوم تھے اور ہیں جن کا ایک واضح مقصد ہے یعنی اللہ کے نظام کی برتری ،اور اسی نظام کے تحت اپنی زندگیاں گزارنا، اور یہ تبھی ممکن تھا جب مسلمانوںکے پاس اپنا ایک الگ وطن ہو، پس دو قومی نظریہ کی بنیاد ہی یہ ہے۔
سیدنا آدم ؑ سے لے کر اب تک دنیا میں دو قسم کے انسانوں کے گروہ ہمیشہ سے موجود رہے ، ایک وہ جو دنیا میںامن و سلامتی اور استحکام کا خواہاں رہا اور دوسرا وہ جو شر اورتباہی چاہتا رہا۔
رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ’’ الکفر ملۃ واحدہ‘‘ یعنی کافر ایک ملت ہیں ، وہ جہاں بھی ہوں گے اسلام کے نظام اور نظریات کی مخالفت کریں گے ،اسی طرح مسلمان اپنے مشترکہ نظریات کی وجہ سے ملت واحد ہیں گویا کہ رسول اللہ ﷺ نے بھی روئے زمین پہ بسنے والوں کو دو گروں اور قوموں میںتقسیم کر دیا،
1):ملت اسلام 2):ملت کفر
اسلام کی عظمت، آفاقیت اور حیران کن جاذبیت سے ملت کفر ہمیشہ خائف رہی ، اسلام سے متعلق شکوک و شبہات پیدا کرنے کے لئے تحریکیں چلیں ، کتابیں ، قصے، اورفلمیں بنائی جاتی رہیں ،لیکن اسلام کی جس کی حفاظت کا ذمہ خود اللہ نے لے رکھا ہے، کافروں کے پنجہ استبداد سے محفوظ رہا،
ہندوستان کے مسلمانوں کی زندگی میں 1761میں ایک اہممور آیا جس سے ان کی بقا اور سلامتی کو شدید خطرلاحق ہوگیا ،اسلامی حکومتوں کی کمزوری سے فائدہ اٹھاتے ہوئے مرہٹے، جاٹ اور سکھوں نے مسلمانوں کے گرد گھیرا تنگ کرنا شروع کردیا، بر صغیر کے مسلمانوںمیں مرکزیت ختم ہونے کے سبب ان کی سیاسی حالت نا گفتہ بہ ہو گئی تھی، روہیل کھنڈ، جنوبیہند، حیدر آباد، بنگال ، اڑیسہ اور پنجاب میںچھوٹی چھوٹی ریاستیںتھیں ، مرکزی حکومت کا دائرہ عمل صرف دہلی کے لال قلعے تک محدودتھا
ان حالات میں ایک مردِ خدا حضرت شاہ ولی اللہ دہلوی نے مسلمانوں کی راہنمائی کا بیڑا اٹھایا ، آپ نے ملکی حالات کا جائزہ لیا اور یہاںکا حکمرانون میںجہاد کی صلاحیت نہ پا کر احمد شاہ ابدالی کو مسلمانوں کی مدد پر آمادہ کیا، احمد شاہ ابدالی ہر قسم کے مالی فوائد سے بے نیاز ہو کر صرف جذبہ جہاد کے تحت 1761میں پانی پت کے میدان میں مرہٹوں کو شکست دینے میںکامیاب ہوئے، پانی پت کی تیسری جنگ میں اگرچہ مسلمانوں کو عظیم فتح حاصل ہوئی لیکن برصغیر کے مسلم حکمرانوں نے اس سے کوئی سیاسی فائدہ نہ اٹھایا اوت نہ ہی باہمی یگانگت اور اتحاد و سلامتی کی کوئی مربوط کوشش کی گئی، مسلمانوں کے اس دور زوال میں بہت سے مجاہدین نے مسلمانوں کی حالت کو سنبھالا دینے کی کوشش کی ،
تیتو میر شہید کی فرائضی تحریک کے ساتھ ساتھ شاہ اسماعیل اور سید احمد شاہ نے جہاد کا آغاز کیا ،یہ تحریکیں جزبہ جہاد سے معمور اور انگریز و سکھوںکیخلاف تھیں ۔
دوسری طرف نواب سراج الدولہ 1757اور سلطان ٹیپو شہیدنے1799 میں غیر ملکی و غیر مسلم سامراج کے خلاف داد شجاعت دی ۔اس عزم جہاد نے ثابت کیا کہ مسلمان ایک الگ قوم ہیں اور اپنا قومی تشخص انکو جان سے پیارا ہے ۔
مغلوں کے زوال کے بعد اصلاحی تحریکوں اور مسلم ریاستوں کے نوابوں نے مشرکین سے جہاد کیا اس سے ملت اسلامیہ کے تصور قومیت اور اتحاد کو بہت فروغ حاصل ہوا۔ یہی وہ محرکات تھے جو جداگانہ اسلامی تشخص سے ارتقائی سفر کرتے ہوئے جداگانہ اسلامی ریاست کے لئے مشعل راہ بنے۔
تاریخ کا مطالعہ کرنے سے یہ بات واضح طور پر سامنے آتی ہے کہ دو قومی نظریہ کی بنیاد پر ہندوستان کی تقسیم کا تصور بہت پرانا ہے ،، دو قومی نظریہ کی روشنی میں برصغیر کی تقسیم کے مبلغین میں نہ صرف مسلمان بلکہ خود ہندو اور انگریز بھی پیش پیش رہے۔
سلطان شہاب الدین محمد غوری نے مسلم ہندو اختلافات کوہمیشہ کے لئے طے کرنے کا ایک حل نکالا اور ہندو راجہ پرتھوی راج کو تجویز پیش کرتے ہوئے کہا کہ :۔
’’ برصغیر میںمسلمانوں اور ہندووں کی باہمی معرکہ آرائی کو ہمیشہ کے لئے ختم کرنے کا واحد حل یہی ہے کہ برصغیر کو دریائے جمنا کو حدِ فاصل بنا کر اس طرح تقسیم کر دیا جائے کہ مشرقی ہندوستان پر ہندووں اور مغربی ہندوستان پر مسلمانوں کو تصرف ہوجائے تاکہ دونوںقومیں امن و امان سے زندگی گزار سکیں ۔
مسٹر جان برائٹ 1817-1898
مسٹر جان برائٹ نے 1858میں حکومت برطانیہ کو تجویز پیش کی کہ ہندوستان کو متعدد خود مختار صوبوں میں تقسیم کر دیا جائے جو بظاہر علیحدہ ہوں لیکن تاجِ برطانیہ کی زیر نگرانی ہوں اوریہ برطانوی اقتدار ختم ہونے پر آزاد اور خود مختار ہوسکیں ۔*
یاد رہے کہ جان برائٹ کی اس تجویز کی اہمیت کے پیش نظر محمد علی جناح نے بھی 31مارچ1944کو فارمین کرسچئین کالج کے طلبہ کے استقبالیے سے خطاب کرتے ہوئے اس کا حوالہ دیاتھا۔
عقیدے اور مذہب کی حیثیت سے ہندو مذہب مبہم اور غیرمعین پہلو رکھتا ہے ،ہندو ، دنیا کی پست ہمت اور عسکری روایات سے محروم واحد قوم ہے جس میں شجاعت و بہادری کی بجائے تعصب ، کینہ پروری اور تنگ نظری کے جذبات پائے جاتے ہیں اگرچہ اہلِ ہند کو حکمرانی کے بہت سے مواقع ملے مگر سازگار ماحول کے باوجود وہ کوئی اچگا تاثر قائم نہ کر سکے ،صدیوں کی غلامی نے ان کا قومی کردار ہی تباہ کر دیا تھا، گائے کے تقدس اور دوسرے جانوروں کی حرمت کے غیر فطری جذبات نے ان کی ترقی کی راہیںمسدود کر دی تھیں ،برصغیر میں مسلمانوں نے اپنی آمد کے بعد گروہی اور طبقاتی تقسیم ختم کرکے برصغیر کو ایک وحدت میں بدلنے کا فریضہ انجام دیا ۔
دو قومینظریہ تحریکپاکستان کیروح اور قیام پاکستان کی بنیاد ہے ۔ دو قومی نظریہ جس کے نتیجے میں پاکستانکا قیام عمل میں آیا ، اگر ہم تحقیقی جائزہ لیں تو کشمیر، فلسطین اور افریقی ممالک کا حل صرف اسی دو قومی نظریے کی روح کو سمجھنے سے ہو سکتا ہے ، اور دو قومی نظریہ ہی مسلمانو ں کی ترقی کا ضامن ہے

*دی پاکستان ریزولیوشن اینڈ دی ہسٹورک لاہور سیشن ، سید شریف الدین پیرزادہ، کراچی 1968

محمد فہیم شاکر، شیخوپورہ

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

تبصرے بند ہیں، لیکن فورم کے قوائد اور لحاظ کھلے ہیں.

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo