ایک یادگار شام : ڈاکٹر عمرانہ مشتاق

میری سمجھ سے یہ بات بالاتر ہے کہ اپنی ذات کے حوالے سے کیسے کالم تحریر کروں۔ ہزاروں کالم تو میں لکھ چکی ہوں مگر آج اپنی ذات کے حوالے سے لکھنا اس لیے ضروری ہو گیا ہے کہ اکادمی ادبیات جو حکومت پاکستان کا وہ گہوارۂ علم و ادب ہے جس میں پاکستانی ادیبوں، شاعروں، افسانہ نگاروں، انشاء پردازوں اور ناول نگاروں کے اعزاز میں شامیں بھی منائی جاتی ہیں اور ان کے ادبی کام کو بھی سراہا جاتا ہے۔ میری ہمیشہ یہ آرزو رہی ہے کہ میں اپنی ذات کے حوالے سے کسی ایسی نمود سے پرہیز کروں جو میرے کام کی رفتار میں کمی لے آئے اور میں اسی پر اکتفا کر کے بیٹھ جائوں مگر میرے انتہائی مہربان اکادمی کے ذمہ دار کلیدی آسامی پر تعینات محمد جمیل کے تقاضے بڑھتے ہی چلے گئے اور بالآخر مجھے اپنی آرزو کو بدلنا پڑا، اور اپنی ذات کے حوالے سے اکادمی ادبیات اور متحدہ عرب امارات میں شعروادب کی گراں مایہ خدمات سرانجام دینے والی ادبی تنظیم فکروفن کے اشتراک کے اشتراک و تعاون سے مابدولت کو لاہور کے نامور ادیبوں، شاعروں اور نقادوں کے درمیان پذیرائی کی رسم ادا کرنے کی نوبت تک پہنچا ہی دیا گیا۔ بین الاقوامی شہرت یافتہ شاعرونقاد حسین مجروح کو صدارت اور اعتبار ساجد کو مہمان خاص کی نشست پر دیکھ کر مجھے اپنی ذات پر اعتبار کرنا ہی پڑا کہ واقعی یہ سارا پروگرام میرے ہی اعزاز میں انعقاد پذیر ہے۔
لاہور کے علاوہ دوسرے شہروں سے بھی میرے خاص احباب محبتوں کے جذبات لے کر آئے تھے۔ میں کبھی بھی اس تقریب کی یادوں کو بھلانہ پائوں گی جو میری آنکھ کی ڈبیہ میں بھی محفوظ ہیں۔ ادیبوں کے علاوہ ملک کی ایک سیاسی جماعت بیدار پاکستان کے بیدار مغز سربراہ میاں عبدالرزاق کا تقریب کے اختتام تک بڑے اطمینان کے ساتھ بیٹھے رہنا بھی میرا اعزاز ہے۔ اعتبار ساجد کا خصوصی مقالہ میرے لیے پی ایچ ڈی کی ڈگری کی ہی طرح عزیز ہے۔ حسین مجروح جنہوں نے ہمیشہ میری حوصلہ افزائی میں اپنے نقدونظر کو شرف و سعادت میں بدلا اور عزت افزائی عطا کی ان کے روشن صدارتی کلمات میرے آئینۂ ادراک پر رنگ و نور کی طرح برس رہے ہیں۔ اقبال راہی کامنظوم ہدیۂ تبریک میرے لیے اعزاز سے کم نہیں۔رخسانہ نور کی دلپذیر گفتگو بھی میرا سرمایۂ زیست ہے۔ روِش سے لے کر آج اکادمی ادبیات کے اس دفترِپارینہ تک میری رخسانہ نور سے بے غرض دوستی کا سفر جاری ہے۔ ویسے بھی روشنی اور خوشبو کے سفر میں رکاوٹ نہیں ڈالی جا سکتی۔ حکیم سلیم اختر کے سرائیکی اور اردو کے حسین امتزاج میں شہد و شیریں سے کشید کیے ہوئے چند جملے میرے لیے گراں مایہ ہیں۔پروفیسر طاہرہ جبیں جو جبینِ ادب کی کہکشاں کی طرح دمک رہی ہیں ان کے قلم سے نکلے ہوئے گراں مایہ انمول موتی میرے لیے زندہ موتیوں کی لڑی سے ایسے جڑی ہوتی ہے کہ جی چاہتا تھا کہ پنجابی زبان کی گہرائی اور گیرائی پر محترمہ طاہرہ جبیں یوں ہی گلفشانی ٔ گفتار سے سامعین کے دلوں میں پنجابی زبان کے لذت انگیز اور فکر انگیز دانش و حکمت کے موتی بکھیرتی رہیں…پروفیسر طاہرہ جبیں کی حسین تحریر نور کی تنویر تھی، وہ بولتی نہیں بلکہ موتی رولتی ہے۔مابدولت کے لیے یہ تحریر ایک یادگار تحریر کے طور پر آنے والی میری یادداشتوں پر مبنی کتاب میں ضرور جگہ پائے گی۔ ممتاز ادیب و خطیب منشاقاضی کو مولائے کریم نے بولنے کا وہ ہنر دیا ہے کہ وہ خطابت کے زور سے سامعین کے حواس خمسہ پر قبضہ کر لیتے ہیں، انہوں نے واقعی پورا سمندر ایک قطرے میں انڈیل دیا۔ اس فن میں وہ یکتائے روزگار ہیں، میں ان کے جذبات و احساسات کی قدر کرتی ہوں۔
ڈاکٹر امجد طفیل کا قول تو قولِ فیصل ہے، آپ نے میرے بارے میں جن خیالات سے کا اظہار کیا وہ ہمارے کالم نگار ضرور تحریر کریں گے۔ میں اپنے اس کالم میں ان کے جذبات و احساسات کی سپاس گزار ہوں۔ تخلیق کے مدیرسنان اظہر، نواز کھرل، فوزیہ چغتائی، امریکہ سے تشریف لائی ہوئی شہرہ آفاق شاعرہ و ادیبہ فرحت زاہد کی آمد تو میرے لیے عید کی خوشیوں کے برابر ہے۔ ممتاز فلم سٹار حیدر سلطان کا میری پذیرائی کے لیے آخر وقت تک موجود رہنا بھی قابلِ تشکر ہے۔بولان اکیڈمی کے سربراہ خلیق احمد کی آمد بھی میرے لیے حوصلہ افزاء ثابت ہوئی۔ اوکاڑہ سے ایم پی اے جاوید علائوالدین بھی تشریف لائے۔ گوجرانوالہ کے معروف سرگرم سیاسی کارکن سفیان اکرم مغل کی بھی ممنون ہوں۔نواز کھرل کی تاخیری کیفیت کی بدولت تقریب کا شیڈول بدلا بدلا تھا۔
محسن شوکت اور طاہر پرویز مہدی نے جس خوبصورتی سے میرے کلام کو گایا اور محفل پہ سحر طاری کر دیا، یقینا میرے لیے یہ ان کی جانب سے بہت بڑا تحفہ تھا۔ ان دونوں نے میری محفل کو ایک یادگار تقریب میں بدل ڈالا۔ میں دونوں کی مشکور ہوں۔شاہد بخاری، زاہد شمسی،فاخرہ انجم، طارق حسن، زاہد عباس و دیگر احباب کی میں شکرگزار ہوں کہ وہ آئے اور محفل کا رنگ دوبالا کیا۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo