کلام ۔ فصیح المک ‘ داغ دہلوی کتاب ۔ کلیاتِ داغؔ یا…

[ad_1] کلام ۔ فصیح المک ‘ داغ دہلوی
کتاب ۔ کلیاتِ داغؔ
یادگارِ داغ کی غزل نمبر ( 156)
کلیات کا صفحہ نمبر 1106 – 1107
ردیف ۔ یائے تحتائی
کلام نمبر ( ۱ )

اس چوٹ کو پوچھے کوئی اس خستہ جگر سے
اترا جو ترے دل سے ، گرا تیری نظر سے

اس طرح گزرتے ہیں تری راہ گزر سے
جو پاوٓں کا ہے کام وہ ہم لیتے ہیں سر سے

دو چار بہے اشک تو کیا دیدہٓ تر سے
بارش کا مزا یہ ہے کہ جو ٹوٹ کے برسے

پروانوں نے گھیرا ہے شبِ غم مجھے آ کر
لو شمع کی اٹھتی ہے مرے داغِ جگر سے

محفل میں رقیبوں کی بلایا تو ہے اس نے
جائیں گے وہاں ہم بھی کفن باندھ کے سر سے

دم لے کے چلا جاوٓں گا مے خانہ ہے نزدیک
اے شیخ بہت دور ہے مسجد مرے گھر سے

کیوں خون برستا ہے تری آنکھ سے ظالم
کیا رنگ اڑایا ہے مرے دیدہٓ تر سے ¿

معشوق پہ ہر حال میں عشاق ہیں قربان
پروانوں کی الفت نہ گئی شمعِ سحر سے

کیا ان کی حقیقت ہے کہ تشبیہ انھیں دوں
غنچے کو ترے لب سے ، رگِ گل کو کمر سے

وہ کوئی گھڑی دید کے قابل تھی لڑائی
جب چھوٹ لڑی ، ان کی نظر میری نظر سے

میری نہ بجھی پیاس تو جھنجلا کے سرِ بزم
ساقی نے سبو کھینچ کے مارا مرے سر سے

یوسف کی محبت کو زلیخا سے تو پوچھو
گو حضرتِ یعقوب کو تھا عشق پسر سے

دیکھا کہ سوا کس میں ہے نرمی و نزاکت
رخسار ملے آج انھوں نے گلِ تر سے

آمادہ ہمی کرتے ہیں یوں قتل پر اپنے
تلوار ہمی باندھتے ہیں ان کی کمر سے

اے داغؔ مصیبت ہے حیاتِ ابدی بھی
اس رنج کو پوچھے کوئی الیاس و خضر سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کلام ۔ فصیح المک ‘ داغ دہلوی
کتاب ۔ کلیاتِ داغؔ
یادگارِ داغ کی غزل نمبر ( 157)
کلیات کا صفحہ نمبر 1108 – 1107
ردیف ۔ یائے تحتائی
کلام نمبر ( ۲ )

آگاہ جو ہوتے ہیں میرے زخمِ جگر سے
اب آنکھ چراتے ہیں وہ اپنی بھی نظر سے

کیوں قبرِ عدو بارشِ رحمت کو نہ ترسے
وہ دوزخی ایسا تھا کہ انگارے ہی برسے

راہیں تھیں سبھی بند مرے دردِ جگر کی
کیا جانے اجل آئی شبِ ہجر کدھر سے

نقشِ قدمِ یار کی مٹی نہ ہو برباد
تر رکھتے ہیں اس واسطے ہم دیدہٓ تر سے

اپنے ہی پہ قربان کِیا آپ نے اس کو
دشمن کا اتارا نہ اتارا مرے سر سے

اس انجمنِ ناز سے آیا ہوں بہت خوش
اللہ بچائے مجھے اپنی بھی نظر سے

یہ عاشق و معشوق کی رخصت بھی غضب ہے
پروانے گلے مل کے جلے شمعِ سحر سے

دیتا ہے وہ کافر و دیں دار کو روزی
خالی نہیں پھرتا کوئی اللہ کے گھر سے

انداز اڑاتے ہیں ، لگاتے ہیں نظر بھی
وہ اس لیے چھپتے ہیں حسینوں کی نظر سے

کیا حشر کے دن دولتِ دیدار ملے گی
دینا نہ پڑے نفع کی امید میں گھر سے

بھولا نہ کبھی قافلہٓ ملکِ عدم راہ
جاتا ہے ادھر ہی کو یہ آتا ہے جدھر سے

بت خانے سے گر ہم کو برہمن نے نکالا
بت بھی تو نکالے گئے اللہ کے گھر سے

معشوق جلے دھوپ میں عاشق اسے دیکھے
بلبل نے کِیا گل پہ نہ سایہ کبھی پر سے

کعبے سے نکل کر رہے بت دل میں کسی کے
اللہ کے گھر میں گئے اللہ کے گھر سے

اس کے لب جاں بخش و خطِ سبز کو دیکھو
باہم ہے ملاقات مسیحا و خضر سے

جانا کہ جلاےٓ گا رقیبوں سے یہ مل کر
وہ بزم میں جا بیٹھے الگ داغؔ کے ڈر سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”””””””
ضیاء علی مغل


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo