رام ریاض کی وفات Sep 07, 1990 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں رام …

[ad_1] رام ریاض کی وفات
Sep 07, 1990
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں رام سب سے بڑا ہوں اور اس زمانے میں
بڑوں کو لوگ گھروں سے نکال دیتے ہیں ۔۔ !

آج 07 ستمبر اردو زبان کے معروف شاعر رام ریاض کا یومِ وفات ھے ۔۔۔۔۔
تاریخ پیدائش : 13 جنوری 1932 ء
تاریخ وفات : 07 سپتمبر 1990 ء

رام ریاض کا اصل نام ریاض احمد ھے ۔ آپ 13 جنوری 1932 ء کو پانی پت ھریانہ مین پیدا ھوئے ۔ آپ کے والد کا نام شیخ نیاز احمد ھے ۔ آپ نے 1945ء میں پرائمری کا امتحان محلہ انصاریاں پانی پت کے مدرسہ شاخِ انصاریاں سے پاس کیا ۔ پھر ابھی مڈل کی تعلیم مکمل نہیں ھوئی تھی کہ ازادی کی صبح درخشاں طلوع ھوئی ۔ اس گل رنگ سویرے میں رام ریاض محلہ گلاب والا ، وارڈ نمبر 5 جھنگ شہر مین پہنچے ۔ مڈل کا امتحان 1950 ء میں حالی مسلم ھائی سکول جھنگ سے پاس کیا ۔ میٹرک کا امتحان ایم بی ھائی سکول جھنگ سے بطور ریگولر اسٹوڈنٹ 1953ء میں پاس کیا عالمی شہرت کے حامل نوبل انعام یافتہ سائنسدان پروفیسر عبدالسلام بھی اسی ادارے مین زیرِ تعلیم رھے ۔
رام ریاض کی شاعری کا آغاز ھائی سکول دور سے ھو چکا تھا ۔ میترک کے بعد رام ریاض نے گورنمنٹ وول سپننگ اینڈ ویونگ سنٹر جھنگ شہر میں داخلہ لے لیا ۔ وہ یہاں 14 اپریل 1955ء سے 22 مئی 1957ء تک زیرِ تعلیم رھے ۔ اور یہاں سے وول ٹیکنا لوجی کا سپننگ ماسٹر ڈپلومہ کورس کامیابی سے مکمل کیا ۔ اس کے بعد صوبہ پختون خواہ کی ایک وول مل مین بحیثیت سپننگ ماسٹر ملازمت اختیار کر لی ۔ یہ ان کی پہلی ملازمت تھی جلد ھی وہ ملازمت چھوڑ کر واپس جھنگ آ گئے اور تعلیم کا سلسلہ دوبارہ شروع کر دیا ۔ 1965ء مین گورنمنٹ کالج جھنگ سے گریجویشن کا امتحان پاس کیا اس وقت تک آپ ریاض احمد شگفتہ کے نام سے معروف تھے ۔ آپ کی ڈگری پر بھی یہی نام درج ھے ۔ کچھ عرصہ بعد آپ نے اپنا قلمی نام رام ریاض اختیار کر لیا ۔
گریجویشن کے بعد رام ریاض نے اسلامیہ ھائی سکول خانیوال مین معلم کی حیثیت سے جاب اختیار کر لی معروف ادیب علی تنہا بھی اسی ادارے کے فارغ التحصیل ھیں ۔ جن کا ذکر رام ریاض بیحد محبت سے کرتے تھے ۔ ملازمت کا یہ سلسلہ بھی زیادہ دیر نہ چل سکا ۔اور آخر کار جھنگ واپس آ گئے ۔ اسی دوران میں ان کی شادی ھو گئی لیکن یہ شادی کامیاب نہ ھو سکی اور آخر کار انہوں نے اپنی بیوی کو طلاق دے دی ۔ مگر تنہائی اور بیروزگاری کا عفریت مسلسل ان کے سر پر منڈلاتا رھا ۔ فکرِ معاش نے ان کے تعلیمی کیرئیر میں جس طرح رخنے ڈالے وہ ان کے امتحانات کی تواریخ سے عیاں ھے ۔ 1973ء میں محکمہ خاندانی منصوبہ بندی میں بحیثیت پبلسٹی آفیسر کے طور پر انہین جاب مل گئی یہ سلسلہ تقریبا 4 برس تک جاری رھا اور بالآخر یہ ملازمت بھی تخفیف کی زد میں آ گئی ۔ اس کے ساتھ ھی رام ریاض کی بیروزگاری ، اور اعصابی شکست و ریخت کا ایک ایسا لرزہ خیز دور شروع ھوا جو ان کی معذوری اور بالآخر ان کی المناک اور حسرت ناک موت پر منتج ھوا ۔
1986ء مین ان کا پہلا مجموعہ کلام پیڑ اور پتے شائع ھوا ۔ 10 جون 1986ء کو فالج کے شدید حملے نے اس توانا شاعر کو مستقل طور پر اپاھج بنا کر رکھ دیا ۔ زندگی کے آخری ایام میں رام ریاض انتہائی کسمپرسی کی حالت میں تھا بیماری ، لاچاری اور بیروزگاری کا زھر اس کی نس نس میں اتر چکا تھا گزراوقات کا واحد ذریعہ اکادمی ادبیات کا 500 روپے ماھانہ وظیفہ تھا ۔ اپنی ضعیف ماں کے ساتھ جس طرح اس نے سانسیں گن گن کر اپنی زندگی کے دن پورے کئے وہ ھمارے لئے لمحہ فکریہ ھیں ۔ لیکن رام ریاض کبھی حرفِ شکایت زبان پر نہ لایا ۔ وھی سدا بہار مسکراھٹ اس کے لبوں پر رھتی اور اپنے داخلی کرب کا اظہار اپنے شعرون کے ذریعے کرتا ۔
میں گر پڑا کہ مرے بازؤوں میں جان نہ تھی
وگرنہ میرا نشیمن تو یہ چٹان نہ تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بے ستوں مکانوں سے پیڑ رام اچھے ھین
گود بھی کشادہ ھے ، چھاؤں بھی زیادہ ھے
اور پھر بالآخر یہ شاعر ایک دن تھک کے گر پڑا ۔ 07 سپتمبر 1990ء کو ایک مخلص دوست ، اچھا انسان ، بےباک شاعر زندگی کی بازی ھار گیا ۔ اب یہ خوبصورت لب و لہجے کا شاعر جھنگ کے نواحی قبرستان میں آسودۃ خاک ھے۔ لیکن اس کے اشعار ھمین ھمیشہ جھنجوڑتے رھیں گے ۔
اب تو ناراض نہ ھو گے ھم سے
کر لیا ھم نے کنارہ لوگو ۔۔۔۔۔۔ !
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چین ایا ھے تو اب نیند بھی آ جائے گی
اور دھرتی ھمیں آرام سے کھا جائے گی
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
کتابیات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پیڑ اور پتے
ورقِ سنگ
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منتخب کلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو برق و باد پروں سے نکال دیتے ہیں
ہم ان کو ہم سفروں سے نکال دیتے ہیں
ترا بھی مہر و مروت پہ اعتقاد نہیں
تو ہم یہ خواب سروں سے نکال دیتے ہیں
جو دل نہ جوڑ سکے، اب تو شیشہ گر اُس کو
سنا ہے شیشہ گروں سے نکال دیتے ہیں
تجھے بھی دن میں اندھیرا نظر نہیں آتا
تجھے بھی دیدہ وروں سے نکال دیتے ہیں
صبا اُدھر سے کبھی لوٹ کر نہیں آئی
اِسے بھی نامہ بروں سے نکال دیتے ہیں
میں رام سب سے بڑا ہوں اور اس زمانے میں
بڑوں کو لوگ گھروں سے نکال دیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج تنہائی میں دل ڈوب گیا
بجھ گیا صبح کا تارا لوگو
اب تو ناراض نہ ہو گے ہم سے
کر لیا ہم نے کنارہ لوگو
کوئی آندھی، نہ بگولہ، نہ ہوا
دشت خاموش ہے سارا لوگو
تم بھی بے برگ نظر آتے ہو
تم پہ چل جائے نہ آرا لوگو
رام دیکھا نہیں جاتا! ورنہ
اور سب کچھ ہے گوارا لوگو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنکھوں میں تیز دھوپ کے نیزے گڑے رہے
ہم تیرے انتظار میں پھر بھی کھڑے رہے
شاید وہ رام میری طرح بدنصیب تھے
جو لوگ تیرے پیار کی ضد پر اڑے رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتھر کی طرح تم نے مرا سوگ منایا
دامن نہ کبھی چاک کیا، بال نہ کھولے
میں نے سرِ گرداب کئی بار پکارا
ساحل سے مگر لوگ بڑی دیر سے بولے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم اوس کے قطرے ہیں کہ بکھرے ہوئے موتی
دھوکا نظر آئے تو ہمیں رول کے دیکھو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا میں زہر گُھلا، پانیوں میں آگ لگی
تمہارے بعد زمانہ بڑا عجیب آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ایسا پست صدا ہوں، میں ایسا تیرہ نصیب
کہیں جواب نہ پاؤں، کہیں جواب ملے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہزار دُکھ ہیں مگر رام کس سے بات کریں
ہمارا کون یہاں ہم زبان رہتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ کو اک عمر ہوئی خاک میں تحلیل ہوئے
تو کہاں سے مری آنکھیں، مرے بازو لایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو مگر عرش نشیں ہے، تجھے معلوم نہیں
لوگ کیوں حلقہء انکارِ خدا میں آئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شبِ فراق جو آئے تو جی میں آتا ہے
کوئی ستارا ہی کرتا رہے اشارے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ایسے انا باز زمانے میں کہاں رام
جو ڈوب گئے اور سمندر نہیں دیکھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کے اس طرح ترے شہر میں کھوئے جائیں
لوگ معلوم کریں، ہم کھڑے روئے جائیں
ورقِ سنگ پہ تحریر کریں نقشِ مراد
اور بہتے ہوئے دریا میں ڈبوئے جائیں
رام دیکھے عدم آباد کے رہنے والے
بے نیاز ایسے کہ دن رات ہی سوئے جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ تو جلا ، نہ کبھی تیرے گھر کو آگ لگی
ہمیں خبر ہے کہ جن مرحلوں سے ہم گزرے
یہ انتظارِ قیامت بڑا قیامت ہے
جو رام ہم پہ گزرنی ہے ایک دم گزرے
،،،،،،،،،،،،،،
ہمارے خیمے ابھی آگ کی لپیٹ میں ہیں
جدھر سے تیز ہوا آئے تم اُدھر رہنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے بعد ، محبت کی رسم ، کیا معلوم
کسے جلائیں، کسے قبر میں اتاریں گے
بہت سے رام یہاں منہ پُھلائے پھرتے ہیں
یہ لوگ جلتے چراغوں میں پھونک ماریں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاتھ خالی ہیں تو دانائی کا اظہار نہ کر
ایسی باتوں کا بڑے لوگ برا مانتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہماری چپ کا بھی اعجاز تم نے دیکھ لیا
ہر ایک شخص ہماری زبان بولتا ہے
………


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo