نیویارک میں مقیم پاکستانی شاعر تنویر پھولؔ کا یومِ…

[ad_1] نیویارک میں مقیم پاکستانی شاعر تنویر پھولؔ کا یومِ پیدائش
August 12, 1948

تنویر پھول معروف اردو غزل، نظم خصوصاً نعت کے عالمی شہرت یافتہ شاعر تنویر پھول 12 اگست 1948 کو مظفر پور (انڈیا) میں پیدا ہوئے۔ ان کا اصل نام تنویر الدین احمد صدیقی ہے۔ ان کے والدین کا تعلق پھول نگر (بہار شریف) سے تھا۔ تنویر پھول حمد و نعت کے بہترین شاعر ہیں۔ تقسیم ہند کے بعد والدین کے ہمراہ کراچی پاکستان تشریف لے گئے۔ تنویر پھول نے ڈی جے سائنس کالج سے 1968 میں انٹرنس کیا، 1971 میں جامعہ کراچی سے بی اے کیا اور پھر 1973 میں جامعہ کراچی ہی سے ایم اے (اسلامی فلسفہ) فرسٹ کلاس کیا۔ زمانہ طالب علمی ہی سے شاعری کا آغاز کیا اور اس کے ساتھ ساتھ اسٹیٹ بینک میں ملازمت بھی کرتے رہے۔ آپ نے غزل، رباعی، دوہا اور ہائیکو پر صنف سخن میں طبع آزمائی کی اور خواب دیکھنے کے بعد حمد اور نعت ہی کہی۔ آپ کا پہلا نعتیہ مجموعہ کلام ’’انورِ حرا‘‘ 1997 میں منظر عام پر آیا۔ حکومت پاکستان نے تنویر پھول کو ان کی اعلیٰ خدمات پر ’’صدارتی ایوارڈ‘‘ سے نوازا۔ یہ ایوارڈ ان کی بچوں کے ادب کے سلسلے میں کی جانے والی خدمات کے سلسلے میں تھا۔ تنویر پھول نے بچوں کے لئے بھی بہترین ادب تخلیق کیا اور پاکستان میں بچوں کے رسائل میں آپ کی بے شمار نظمیں شائع ہوئیں۔ آپ کی تصانیف میں گلشنِ سخن، خوشبو بھینی بھینی، تنویرِ حرا، انوارِ حرا، رشکِ باغِ ارم، تنویرِ حرا (جلد دوم)، دھواں دھواں چہرے، زبورِ سخن، قندیلِ حرا، چڑیا تتلی پھول (بچوں کی نظمیں)،
نغمات پاکستان (بچوں کا ادب)، ارحم الراحمین وغیرہ شامل ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نو برس کی عمر میں کہا گیا شعر
نقش الفت کا ہم ابھاریں گے
زلفِ گیتی کا خم سنواریں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موسیٰ بولے سب کا رازق ہے مولا
پتھر میں کیڑے کو پلتے دیکھا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حمد
تو نے دُنیا کو دلکشی بخشی
ماہ و انجم کو روشنی بخشی
کوہساروں کو سر بلند کیا
آبشاروں کو نغمگی بخشی
دھوپ سے جب گرم ہوا صحرا
رات میں اس کو چاندنی بخشی
خوش گلو کر دیا عنادل کو
گُل کو پوشاک شبنمی بخشی
اپنے محبوب کے تصدق میں
نوع انساں کو برتری بخشی
خلق انسان کو کیا تو نے
اس کو عرفان و آگہی بخشی
دل کو توفیق حمد و نعت کی دی
تو نے ہی اُلفتِ نبی بخشی
تو نے بخشا گداز ہے دل کو
تو نے آنکھوں کو ہے نمی بخشی
بادِ بطحا صبائے طیبہ سے
پھول کو تو نے تازگی بخشی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
خزاں نے کہا یہ ، بہار آ نہ جائے
دل مضطرب کو قرار آ نہ جائے
نہ یوں میٹھی میٹھی نگاہوں سے دیکھو
ہمیں پیار دیوانہ وار آ نہ جائے
یہ جشن طرب ہے ، یہاں سخت پہرے
اچانک کوئی دل فگار آ نہ جائے
وطن کی محبت میں محصور ہے جو
کہیں وہ غریب الدیار آ نہ جائے
وڈیروں کو ہے فکر ، ہاری کی کشتی
تلاطم سے غربت کے، پار آ نہ جائے
نگاہوں میں فرد عمل اپنی رکھو
اچانک وہ روز شمار آ نہ جائے
کہا پھول نے ، گل سے بھرلیں وہ دامن
کہیں ان کے دامن میں خار آ نہ جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo