سبینہ سحرؔ کا یومِ پیدائش August 10, 0000 سبین…

[ad_1] سبینہ سحرؔ کا یومِ پیدائش
August 10, 0000

سبینہ سحرؔ کو شاعری سے عشق اور جنون ہے۔بچپن سے ہی انہیں شاعری کا شوق تھا۔ گھر کے علمی و ادبی ماحول نے بھی ان کے اس شوق کو پروان چڑھایا۔ان کے والد محترم لاہور کے ایک ہائی سکول میں شعبہ اردو کے استاد تھے۔ اسی وجہ سے انہوں نے زمانہ طالب علمی سے ہی شعر کہنا شروع کر دیۓ تھے۔کوئین میری کالج سے گریجویشن کے بعد جب اورینٹل کالج پنجاب یونیورسٹی میں داخل ہوئیں تو ان کے اردو ادب کے استاتذہ نے ان کی حوصلہ افزائی کی۔ ان کی پہلی غزل جو کہ ریڈیو پاکستان لاہور کے ادبی پروگرام پہ نشر ہوئی جس کا ایک شعر یہ تھا
پتھر کے صنم سے میں دعا مانگ رہی ہوں
چپ چاپ سمندر سے نوا مانگ رہی ہوں
اس غزل پہ انہیں بہت پذیرائی ملی اور ان کی خود اعتمادی میں اضافہ ہوا اور پھر شاعری کا شوق اور گہرا ہوتا چلا گیا جو آج تک جاری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
1993ء میں انہوں نے برطانیہ میں سکونت اختیار کر لی۔وہاں پر وہ درس و تدریس کے شعبے سے منسلک ہو گئیں۔ وہاں لندن میں ایک تنظیم و التھم فاریسٹ پاکستانی کیمونٹی ہے جس کے سربراہ جناب امجد مرزا صاحب ہیں،جو اردو ادب کی خدمات سر انجام دے رہے ہیں سبینہ سحرؔ ان کے مشاعروں میں باقاعدگی سے شرکت کرتی ہے اور اللہ کے فضل سے انہیں بہت پذیرائی ملتی ہے۔شاعری کی باقاعدہ تربیت تو انہوں نے حاصل نہیں کی البتہ کچھ قابل قدر ہستیوں نے ان کی راہنمائی کی۔ ان میں خاص طور پر جناب افضل گوہرؔ راؤ نمایاں ہیں۔ان ہی کی راہنمائی کی بدولت ان کی کتاب “خواب سحرؔ ” شائع ہوئی۔
سبینہ سحرؔ اپنی کتاب میں بیٹی کا ذکر کرتے ہوۓ لکھتی ہیں کہ یہاں اگر میں اپنی پیاری بیٹی مہرین کا ذکر نہ کروں تو نا انصافی ہو گی۔مہرین ہی سب سے پہلی شخصیت ہے جسے میری تخلیقات کو کتابی صورت میں دیکھنے کی آرزو تھی۔ سو اگر میں یہ کہوں کہ “خواب سحر” میری بیٹی کے خواب کی تعبیر ہے تو بے جا نہ ہو گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ان کی کتاب “خواب سحر” سے منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شب کے سینے پہ،جو پھیلی ہے چُنریا غم کی
لوگ اس درد کی شدت کو سحرؔ کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بارہا اس دل ناداں نے محبت کی ہے
اور ہر بار فقط تجھ پہ عنایت کی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خوش ہوں کہ زندگی کو نیا راستہ دیا
مجھ کو تمھارے ہجر نے شاعر بنا دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تاریکی میں شمع کوئی،جب کرتی ہے من مانی
میرے دل میں جاگ اٹھتی ہے تیری یاد پرانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے پیار نے جاناں،قسم سے جان لے لی تھی
ملا کر سانس سے سانسیں،میری پہچان لے لی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیسا معجزہ ہے،کہ صحرا کی ریت پر
کِھلتے ہیں پھول آپ کے قدموں تلے جناب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اردو زبان کی شان میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری شاعری اتنی دلکش نہ تھی
جو اس کو بیاں میں نہ اردو میں کرتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بھی چاہے۔یہاں خوابِ سحر میں گم ہو
اسے صنم،میرے ہر اک دن کا تو سورج تم ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تاریکی میں شمع کوئی جب کرتی ہی من مانی
میر ے دل میں جاگ اٹھتی ہے تیری یاد پرانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ علم ہے وہ ظلم ڈھائیں گے عمر بھر
مولا تو پھر بھی زندگی ان کی دراز کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یوں چاہتوں میں ہم کو سجانے پڑیں گے پھول
قدموں میں تیرے لا کے بچھانے پڑیں گے پھول
آنکھوں کے راستے وہ مرے دل میں آۓ گا
خوابوں کی وادیوں میں اگانے پڑیں گے پھول
سوچا نہیں تھا ہم نے کہ خوشیوں کے واسطے
کانٹوں کی گود سے بھی اٹھانے پڑیں گے پھول
لوگوں کا جب مزاج ہی پتھر کا ہو گیا
پھر پتھروں کے ہم کو بنانے پڑیں گے پھول
ہم نے سنا ہے ملنے کو آۓ گا وہ ضرور
خوشیوں کی ہر ڈگر پر کھلانے پڑیں گے پھول
ایسا نہ ہو کہ کِھلنے سے پہلے سوکھ جائیں
دشمن کی بد نظر سے بچانے پڑیں گے پھول
میں نے اک بہار کی خواہش میں جان دی
اب میری قبر پر بھی بچھانے پڑیں گے پھول
اس تیرگی سئ اب تو مرا دل اداس ہے
اے رات سحرؔ کے کِھلانے پڑیں گے پھول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جہانِ خواب میں اک راستہ بناتے ہوۓ
میں کھو نہ جاؤں کہیں کچھ نیا بناتے ہوۓ
بھڑکتی آگ میں بھی مسکرا کے چلتے رہے
ہم ایک دوسرے کو آسرا بناتے ہوۓ
ہزار کوششوں سے کچھ نہیں ملا،لیکن
خود اپنی ذات ملی آئینہ بناتے ہوۓ
میں خود ہی ڈوب گئی رات کے اندھیرے میں
تمھارا چہرہ کسی چاند سا بناتے ہوۓ
ہوا سے جنگ لڑی ہے بہت دنوں میں نے
کسی کے جسم کی خاطر قبا بناتے ہوۓ
جنونِ شوق کے رستے پہ ساتھ چلتے رہے
سحرؔ کے خواب کو ہم نقشِ پا بناتے ہوۓ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گرجتے بادلوں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
برستی بارشوں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
مجھے بس ذات میں تیری سبھی موسم ملے جاناں
بدلتے موسموں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
سبھی داغوں کو دل کے آنسوؤں نے دھویا دیا ایسے
بکھرتے آنسوؤں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
ملے جو نینوں سے تو بیتی رات آنکھوں میں
سُہانے رتجگوں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
جو میرے نا خدا تم ہو تو کیوں ساحل کی ہو پرواہ
اُبھرتے ساحلوں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
یہ روشن آئینہ جو ہے ترے چہرے کا جلوہ ہے
چمکتے آئینوں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
سحرؔ کے دوستوں میں تو فقط اُجلے سویرے ہیں
سو اپنے دشمنوں سے اب مجھے کچھ بھی نہیں کہنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم کون ہو میرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے تم کون ہو میرے
مرے خوابوں میں آتے ہو
خیالوں پر بھی چھا جاتے ہو
ذرا سا مسکراتے ہو
مرے دل کو لُبھاتے ہو
مری آنکھوں کی مستی کو سرورومے بھی کہتے ہو
مرے ہونٹوں کی نرمی کو گلابوں سے ملاتے ہو
ارے تم کون ہو مرے
گھنیرے بالوں جیسے
مری ہستی پر چھاتے ہو
مدھر چاہت کی برکھا میں مرا تن من جلاتے ہو
ارے تم کون ہو میرے؟
شب تنہائی میں آ کر
مجھے دلہن بناتے ہو
مگر دنیا کے میلے میں
مرے سارے سوالوں پر بڑے گم سم سے رہتے ہو
بنا جو پوچھے مری دنیا سے واپس لوٹ جاتے ہو
ارے تم کون ہو مرے؟
میں روتی ہوں ، تڑپتی ہوں
تمھیں واپس بلاتی ہوں
کئی صدیاں بِتا کے پھر
مری دنیا میں آتے ہو
کسی سے پوچھ کر میرا
مجھے ملنے بھی آتے ہو
لحد کو دیکھ کر میری
ذرا سا سر جھکاتے ہو
یونہی کچھ سوچ کر اس کو
گلابوں سے سجاتے ہو
چھپے خاروں سے سینے میں نۓ گھاو لگاتے ہو
ارے تم کون ہو میرے؟
سحرؔ کی زندگی تم ہو
پر اس کو دکھ ہی دیتے ہو
بتاؤ تو سہی اے دشمن جاں کون ہو میرے؟
ارے تم کون ہو میرے؟
ارے تم کون ہو میرے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے عادت ہے ہنسنے کی ہمیشہ مسکرانے کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ شوخی اور شرارت تو میری فطرت کا حصہ ہے
میری یہ خوش مزاجی تو کسی نیکی کا بدلہ ہے
میرے سب مہربانوں کی دعاؤں کا نتیجہ ہے
مجھے عادت ہے ہنسنے کی ہمیشہ مسکرانے کی
کسی کی بے وفائی سے بھی میں روتی نہیں ہر گز
کسی کے زخم دینے سے بھی کوئی دکھ نہیں ہوتا
خدا کی برکتوں کو ہی ہمیشہ یاد رکھتی ہوں
بناوٹ کے اصولوں سے
ہمیشہ دور رہتی ہوں
مجھے عادت ہے ہنسنے کی ہمیشہ مسکرانے کی
مجھے عادت ہے باتوں کی
میری باتوں پہ مت جانا
مجھے عادت ہے ہنسنے کی
میرے ہنسنے پہ مت جانا
میری آنکھوں کی شوخی کو
کوئی بھی نام مت دینا
میرے ہونٹوں کی مستی کو
کوئی الزام مت دینا
مجھے عادت ہے ہنسنے کی ہمیشہ مسکرانے کی


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

slot hoki terpercaya

slot online gacor Situs IDN Poker Terpercaya slot hoki rtp slot gacor slot deposit pulsa
Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo