خوبصورت شاعرہ ، ادکارہ مینا کماری کی پیدائش Aug 01…

[ad_1] خوبصورت شاعرہ ، ادکارہ مینا کماری کی پیدائش
Aug 01, 1932

تاریخ پیدائش : یکم اگست 1932ء۔ ۔ ۔ تاریخ وفات : 31 مارچ 1972ء

منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پوچھتے ہو تو سنو کیسے بسر ہوتی ہے
رات خیرات کی، صدقے کی سحر ہوتی ہے

سانس بھرنے کو تو جینا نہیں کہتے یا رب!
دل ہی دُکھتا ہے نہ اب آستیں تر ہوتی ہے

جیسے جاگی ہوئی آنکھوں میں چبھیں کانچ کے خواب
رات اس طرح دوانوں کی بسر ہوتی ہے

غم ہی دشمن ہے مرا، غم ہی کو دل ڈھونڈتا ہے
ایک لمحے کی جدائی بھی اگر ہوتی ہے

ایک مرکز کی تلاش ایک بھٹکتی خوشبو
کبھی منزل کبھی تمہیدِ سفر ہوتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یوں تیری رہگزر سے دیوانہ وار گزرے
کاندھے پہ اپنے رکھ کے اپنا مزار گزرے

بیٹھے ہیں راستے میں دل کا کھنڈر سجا کر
شاید اسی طرف سے اک دن بہار گزرے

بہتی ہوئ یہ ندیا۔۔۔ گھُلتے ہوئے کنارے
کوئی تو پار اترے، کوئی تو پار گزرے

تو نے بھی ہم کو دیکھا، ہم نے بھی تجھ کو دیکھا
تو دل ہی ہار گزرا۔۔۔ ہم جان ہار گزرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آبلہ پا کوئی اس دشت میں آیا ہو گا
ورنہ آندھی میں دیا کس نے جلایا ہو گا
ذرے ذرے پہ جڑے ہوں گے کنوارے سجدے
اک اک بت کو خدا اس نے بنایا ہو گا
پیاس جلتے ہوئے ہونٹوں کی بجھائی ہو گی
رستے پانی کو ہتھیلی پہ سجایا ہو گا
مل گیا ہو گا اگر کوئی سنہرا پتھر
اپنا ٹوٹا ہوا دل یاد تو آیا ہو گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آغاز تو ہوتا ہے انجام نہیں ہوتا
جب میری کہانی میں وہ نام نہیں ہوتا
جب زلف کی کالک میں گھل جاۓ کوئی راہی
بدنام سہی لیکن گمنام نہیں ہوتا
ہنس ہنس کے جواں دل کے ہم کیوں نہ چنیں ٹکڑے
ہر شخص کی قیمت میں انعام نہیں ہوتا
دل توڑ دیا اس نے یہ کہہ کر نگاہوں سے
پتھر سے جو ٹکراۓ وہ جام نہیں ہوتا
دن ڈوبے ہیں یا ڈوبی بارات لۓ کشتی
ساحل پہ مگر کوئی کہرام نہیں ہوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب چاہا اقرار کیا جب چاہا انکار کیا
دیکھو ہم نے خود ہی سے کیسا انوکھا پیار کیا
ایسا انوکھا ایسا تیکھا جس کو کوئی سہہ نہ سکے
ہم سمجھے پتی پتی کو ہم نے ہی سرشار کیا
روپ انوکھے میرے ہیں اور روپ یہ تو نے دیکھے ہیں
میں نے چاہا کر بھی دکھایا یا جنگل کو گلزار کیا
درد تو ہوتا رہتا ہے درد کے دن ہی پیارے ہیں
جیسے تیز چھری کو ہم نے رہ رہ کر پھر دھار کیا
کالے چہرے کالی خوشبو سب کو ہم نے دیکھا ہے
اپنی آنکھوں سے ان کو شرمندہ ہر بار کیا
روتے دل ہنستے چہروں کو کوئی بھی نہ دیکھ سکا
آنسو پی لینے کا ہاں وعدہ سب نے ہر بار کیا
کہنے جیسی بات نہیں ہے بات تو بالکل سادہ ہے
دل پر ہی قربان ہوۓ اور دل ہی کو بیمار کیا
شیشے ٹوتے یا دل ٹوٹے خشک لبوں پر موت آۓ
جو کوئی بھی نہ کر سکا وہ ہم نے آخر کار کیا
نازؔ تیرے زخمی ہاتھوں نے جو بھی کیا اچھا ہی کیا
تو نے سب کی مانگ سجائی ہر اک کا سنگسار کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹوٹے ہوۓ ہاتھوں سے کوئی بھیک نہ مانگے
جو فرض تھا وہ قرض ہے پر اس طرح نہ ہو


[ad_2]

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…

Situs sbobet resmi terpercaya. Daftar situs slot online gacor resmi terbaik. Agen situs judi bola resmi terpercaya. Situs idn poker online resmi. Agen situs idn poker online resmi terpercaya. Situs idn poker terpercaya.

situs idn poker terbesar di Indonesia.

List website idn poker terbaik.

Situs slot terbaru terpercaya

Bergabung di Probola situs judi bola terbesar dengan pasaran terlengkap bergabunglah bersama juarabola situs judi bola resmi dan terpercaya hanya di idn poker terpercaya 2022 daftar sekarng di agen situs slot online paling baik se indonesia
trading binomo bersama https://binomologin.co.id/ daftar dan login di web asli binomo